بھارتی ہٹ دھرمی،پاکستان سے تجارت بھی بند،سیکڑوں ٹرک روک دئیے

Spread the love

پاکستان اور بھارت کے درمیان تجارت کا سلسلہ بند ہوگیا اور بھارتی تاجروں نے تمام آرڈرز منسوخ کردیے،سیمنٹ کے 350 بڑے ٹرک واہگہ بارڈر پر رک گئے، سوڈا ایش، چمڑا، سالٹ اور کیمیکلز کے سیکڑوں ٹرک بھی بارڈر پر موجود۔ وزارت تجارت کے مطابق گزشتہ دو روز سے پاکستان سے کوئی بھی مال بھارت نہیں جاسکا جب کہ بھارتی حکومت نے پاکستانی اشیا پر 200 فیصد یگولیٹری ڈیوٹی عائد کردی ہے، بھارتی تاجروں نے 16 فروری کو جانے والا کروڑوں روپے کا مال واپس پاکستان بھیجنیکا فیصلہ کرلیا جب کہ بھارتی تاجروں نے ایڈوانس میں دیے گئے کروڑوں روپے بھی واپس مانگ لیے ہیں، سیمنٹ کے 350 بڑے ٹرک واہگہ بارڈر پر رک گئے جب کہ سوڈا ایش، چمڑا، سالٹ اور کیمیکلز کے سیکڑوں ٹرک بھی واہگہ بارڈر پر موجود ہیں۔ دریں اثناء پلوامہ حملے کے بعد پاک بھارت کشیدگی کے باعث بھارت نے دو طرفہ بس سروس کے بعد تیتری نوٹ اور چکاں دا باغ کے درمیان ہونے والی آر پار تجارت بھی معطل کر دی سینکڑوں مال بردار ٹرک لائن آف کنٹرول پر روک دیے گئے ۔تفصیلات کے مطابق بھارت کی جانب سے پیر کے روز سرینگر مظفرآباد،پونچھ راولاکوٹ بس سروس کی معطلی کے بعد منگل کے روز ہونے والی منقسم کشمیر کے درمیان تیتری نوٹ چکاں داباغ انٹرا کشمیر تجارت بھی معطل کر دی جس کے باعث سینکڑوں مال بردار ٹرک لائن آف کنٹرول کراس نہیں کر سکے جبکہ دوسری طرف سرینگر مظفرآباد تجارت معمول کے مطابق رواں دواں رہی آزاد کشمیر سے35مال بردار ٹرک لائن آف کنٹرول کو چکوٹھی اوڑی کراسنگ پوائنٹ سے کراس کر کے مقبوضہ کشمیر پہنچے اور مقبوضہ کشمیر سے بھی 35ٹرک آزاد کشمیر آگئے زرائع کے مطابق بدھ،جمعرات اور جمعہ کے روز بھی سرینگر مظفرآباد تجارت معمول کے مطابق رواں دواں رہے گی البتہ تیتری نوٹ چکاں دا باغ کراسنگ پوائنٹ سے ہونے والی انٹرا کشمیر تجارت کی بحالی کے حوالہ سے تاحال حکام نے کنفرم نہیں کیا کہ وہ کب تک بحال کر دی جائے گی۔دریں اثناء بھارت نے ریاست راجستھان آئے ہوئے پاکستانیوں کو 48 گھنٹے میں ملک چھوڑنے کی وارننگ دی ہے، بیکانیر کی عدالت نے مسلمانوں پرہونے والے حملوں اوران کی املاک کونقصان پہنچائے جانے کے واقعات کے بعد پاکستانی شہریوں کے لیے حکم جاری کیا ہے۔ منگل کو بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق بھارت نے ریاست راجستھان آئے ہوئے پاکستانیوں کو 48 گھنٹے میں ملک چھوڑنے کی وارننگ دی ہے۔پلوامہ واقعے کے بعد بھارت میں مقیم پاکستانیوں کے لئے بھی مشکلات بڑھ گئیں۔راجستھان کے ضلع بیکانیر کی عدالت نے مسلمانوں پرہونے والے حملوں اوران کی املاک کونقصان پہنچائے جانے کے واقعات کے بعد پاکستانی شہریوں کے لیے حکم جاری کیا ہے۔بھارتی شہریوں سے کہا گیا ہے کہ وہ پاکستانیوںکو ملازمت نہ دیں اور پاکستان کے ساتھ کسی بھی قسم کا کاروبار ی تعلق بھی قائم کرنے سے اجتناب برتیں۔اگلے ماہ حضرت خواجہ معین الدین چشتی رحم اللہ تعالی علیہ کے عرس کی تقریبات میں شرکت کے لیے اجمیر شریف راجستھان جانے کے خواہشمند پاکستانی زائرین کے لیے بھی مشکل پیدا ہوگئی ہے۔

Leave a Reply