ایران،سعودی عرب ہمارے برادار ملک،یمن تنازع کا حصہ نہیں بن رہے،پاکستان

Spread the love

وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے سعودی ولی عہد کے دورہ کے موقع پر کم از کم 8مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط متوقع ہیں ، مفاہمتی یادداشتوں کو عملی جامہ پہنانے کیلئے کوآرڈینیشن کونسل بنائی جائیگی جس کی سربراہی پاکستان کی طرف سے وزیر اعظم عمران خان اور سعودی عرب کی طرف سے کراؤن پرنس شہزادہ محمد بن سلمان خود کریں گے،

آج میونخ روانہ ہورہا ہوں ، افغان صدر اشرف غنی اور روس ، جرمن اور کینیڈا کے وزراء خارجہ سے ملاقاتیں ہوگی ،ہمارے تعلقات امریکہ سے مزید بہتر ہو رہے ہیں، زلمے خلیل زاد کے ریمارکس اطمینان بخش ہیں ،

سی پیک کے تحت تین اسپیشل اقتصادی زون بنیں گے، ہم چاہیں گے گوادر انرجی تجارت کا ایک مرکز بن جائے ہم سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات کو بھی خوش آمدید کہیں گے،

پاکستان کویمن تنازعہ میں جھونکنے کی کوئی کوشش یا سازش نہیں ہورہی نہ ہی پاکستان اس تنازعے کا حصہ بنے گا ،ہمارے ایران کے ساتھ برادرانہ تعلقات ہیں۔

بدھ کو وفاقی وزیر اطلاعا ت و نشریات چوہدری فواد حسین ، مشیر تجارت عبد الرزاق دائود ، چیئر مین سرمایہ کاری بورڈ ہارون شریف کے ہمراہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے دورہ پاکستان کے حوالے سے میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا پریس کانفرنس کے دو بنیادی مقاصد تھے ایک تو سعودی ولی عہد کے دورہ پاکستان کے حوالے سے آپ کو اعتماد میں لینا اور دوسرا آج جمعرات دورہ میونخ جرمنی روانگی سے آگا ہ کرنا

۔شاہ محمود قریشی نے کہا سعودی ولی عہد دو روزہ دورے پر آرہے ہیں جو بہت اہمیت کا حامل ہے۔ ہمارے سعودی عرب کے ساتھ نئے تعلقات بننے جارہے ہیں، پچھلی حکومت کے سعودی عرب سے تعلق ختم ہوچکے تھے، دوریاں بڑھ گئیں تھیں۔

وزیر اعظم عمران خان کے دورہ سعودی عرب کے بعد دونوں ممالک میں نئےتعلقات کی بنیاد پڑی، اب یہ تعلقات کیسے ہیں 16اور 17فروری کو پاکستان سمیت پوری دنیا دیکھے گی .سعودی عرب نے مشکل حالات میں جس طرح دل کھول کر ہماری مدد کی ہے وہاپنی مثال آپ ہے.

Leave a Reply