Imran Khan Prim minister Pakistan 58

اپریل کے آخرتک ہسپتالوں پر دبائو بڑھے گا، عمران خان

کوئٹہ(سٹاف رپورٹر) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مشاورت چل رہی ہے،لاک ڈاؤن میں نرمی کا فیصلہ 14اپریل کوکریں گے۔ چودہ اپریل کوفیصلہ کریں گے کون سے شعبے کھولنے ہیں۔بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال اور وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان میں سب سے زیادہ غربت بلوچستان میں ہے،

کرونا وائرس کی وجہ سے سارا پاکستان متاثر ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ چھوٹے دکاندار لاک ڈاؤن کی وجہ سے متاثر ہو رہے ہیں اور اس کے باعث ہم کوشش کر رہے ہیں کہ ان لوگوں کی کیسے مدد کر سکیں، اس کے لیے آج ہم نے احساس پروگرام شروع کیا ہے۔عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کی تاریخ میں سب سے بڑا احساس پروگرام شروع کیا ہے جو اس سے قبل کسی بھی حکومت نے شروع نہیں کیا تھا، ایک کروڑ 20 لاکھ خاندان کو ہم 12 ہزار روپے دیں گے، تقریباً سولہ ہزار پوائنٹس پر پورے پاکستان میں اس کا آغاز کر دیا ہے۔

وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ بلوچستان میں غربت سب سے زیادہ ہے، تو اسی لیے میں آیا تھا کہ تاکہ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کے ساتھ پوری طرح بات کر سکیں، کہ کیسے ہم لوگوں کی زندگی بہتر کر سکتے ہیں۔بات کو جاری رکھتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ 14 تاریخ کو بلوچستان سمیت سارے صوبے فیصلہ کریں گے کہ کون کون سی چیزیں کھولنی ہے تاکہ لوگوں کو روز گار مل سکے۔ اس پر ابھی مشاورت چل رہی ہے۔ اس کا فیصلہ 14 تاریخ کو ہو جائے گا۔عمران خان کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس پورے پاکستان کے لیے مسئلہ ہے اور مجھے امید ہے سارا پاکستان مل کر اس وباء کے ساتھ لڑے گا اور قوم یہ جنگ جیتے گی،

یہ بار بار اس لیے کہتا ہوں کہ حکومت یہ جنگ اکیلے نہیں جیت سکتی۔وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ مغرب کے پاس بہت سارے وسائل ہیں وہ بھی بہت مشکل میں پڑے ہوئے ہیں، اگر چین نے اس وباء پر قابو پایا ہے تو اس کی سب سے بڑی وجہ حکومت اور عوام نے مل کر وباء کا مقابلہ کیا۔ان کا کہنا تھا کہ ہماری پوری کوشش ہے کہ سب کی مدد کریں جدھر کدھر لوگوں کو مدد کی ضرورت ہے وہاں پر اشیاء پہنچائیں کیونکہ بلوچستان میں غربت سب سے زیادہ ہے، اسی وجہ سے میں نے صوبے کا دورہ کیا۔اس سے قبل میڈیا سے گفتگو میں وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ہمیں لگ رہا ہے کہ رواں ماہ کے آخر تک ملک کے ہسپتالوں پر بہت دباؤ پڑے گا تاہم ہم سب نے مل کر اس کورونا وائرس کی صورتحال سے نمٹنا ہے۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس کی وجہ سے ایک ایسی صورتحال پیدا ہوئی ہے جس کی کوئی مثال نہیں لہٰذا میرا آنے کا مقصد یہ ہے کہ ہم ایک قوم بن کر مقابلہ کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمیں اس صورتحال کی وجہ سے 2 چیزوں کی فکر ہے ایک یہ کہ اس سے ہماری صحت کی سہولیات پر جو دباؤ پڑ رہا ہے تاہم فی الحال ابھی اتنا زیادہ دباؤ نہیں ہے لیکن جو ہم دیکھ رہے ہیں اور دنیا میں جس طرح اضافہ ہورہا ہے اس کو دیکھتے ہوئے ہمارا اندازہ ہے کہ اپریل کے آخر تک ہسپتالوں پر بہت دباؤ ہوگا۔عمران خان کا کہنا تھا کہ پورا ملک اس سے نمٹنے کی تیاری کررہا ہے، ہمارا ایک نیشنل کمانڈ ایک آپریشن سینٹر بنا ہے جس میں روازنہ سارے چیف سیکریٹریز اور صوبوں کے ساتھ رابطہ ہوتا ہے،

اس کے علاوہ ہمارے ماہرین صحت کورونا وائرس کے کیسز کا مکمل جائزہ لے رہے ہیں اور یہ بھی دیکھ رہے کہ کتنی اموات ہوئی اور ان کی کیا عمر تھی جبکہ ابھی کتنے لوگ آئی سی یوز میں ہیں۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہمارے لیے سب سے ضروری ہے کہ ہم یہ دیکھیں کہ بھارت اور بنگلا دیش میں کیسز کس طرح کے ہیں کیونکہ ان کی اور ہماری آبادی ملتی جلتی ہے اور اس سب چیزوں کا بھی جائزہ لیا جارہا ہے۔

کورونا وائرس سے تحفظ کے سامان پر بات کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہمارے ڈاکٹرز، نرسز، ہیلتھ ورکرز کے لیے خصوصی حفاظتی کپڑوں پر پورا زور لگایا ہوا ہے جبکہ جو لوگ انتہائی نگہداشت میں کام کریں گے ان کے لیے حفاظتی کٹس پورے کردیے ہیں، تاہم اللہ کا کرم ہے کہ بلوچستان میں ابھی تک کوئی مریض آئی سی یو میں نہیں گیا۔

Leave a Reply