آن لائن کاروبار صرف ایک رسید پر، حکومتی ایس او پیز جاری

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

کراچی (سٹاف رپورٹر) آن لائن کاروبار
حکومت سندھ نے آن لائن کاروبار کرنیوالوں کے ایس او پی جاری کر دیئے۔سندھ حکومت کی طرف سے جاری کیے گئے ایس او پیز کے مطابق آن لائن کاروبار رسید پر ہوگا ،آن لائن کاروبار کی ایک رسید بطور ثبوت حکومت کو بھی جمع کروانی ہوگی۔ایس او پیز کے مطابق کاروبار کا مالک ملازمین کی صحت کا ذمہ دار ہو گا، ملازمین کی آمد کیساتھ ہی ان کا بخار چیک کیا جائیگا، مارکیٹ کا سربراہ ایس او پی پرعملدرآمد کروانے کا پابند ہو گا۔

آسٹریلیا میں لڑکی کیساتھ ایسا ناقابل یقین ظلم جسے جان کر روح کانپ اٹھے

ایس او پیز میں مزید بتایا گیا ہے کہ کسی بھی دکاندار کو الگ سے کسی اجازت کی ضرورت نہیں، کسی بھی صورت میں دکان پر گاہک کے آنے کی اجازت نہیں ہو گی۔ آن لائن آرڈر لیے جائینگے۔محکمہ داخلہ سندھ کے حکم نامے کے مطابق دکان کھولنے کی اجازت ہرگز نہیں ہو گی، آن لائن کاروباری سرگرمیوں کا اطلاق 27اپریل سے تاحکم ثانی ہو گا،

صرف رجسٹرڈ سٹاف کام کر سکے گا ۔ کسی ایک بھی ایس او پی کی خلاف ورزی کی صورت میں کاروبار معطل کردیا جائیگا۔یاد رہے کہ گزشتہ روز رمضان المبارک سے متعلق سندھ حکومت نے بڑا حکم نامہ جاری کیا تھا، تراویح گھروں پر ادا کرنے کا حکم جاری کیا گیا تھا، فروٹ چاٹ سموسے اور پکوڑے کے سٹالز لگانے پر پابندی لگا دی گئی تھی۔

ماہ صیام کے حوالے سے سندھ حکومت نے ایس او پیز پر مبنی حکم نامہ جاری کیا تھا، حکم نامے کے مطابق تراویح کی ادا ئیگی گھروں پر ہوگی،مساجد آنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ افطار کے روایتی لوازمات فروٹ چاٹ سموسے اور پکوڑے کے سٹالز لگانا منع ہوگا ۔ روزے دار صرف ہوم ڈیلیوری کے ذریعے اشیاء منگوا سکتے ہیں۔

حکم نامے میں کہا گیا تھا کہ کریانہ سٹور اور سبزی کی دکانیں صبح آٹھ بجے سے شام پانچ تک کھلی رہیں گی، دودھ کی دکانوں کورات آٹھ بجے تک کام کی اجازت ہوگی، ریستوران شام پانچ سے رات دس بجے تک ڈیلیوری کرسکتے ہیں ، ہوٹلز میں ٹیک اوے پر پابندی برقرار رکھی گئی ہے۔

سندھ حکومت کے حکم نامے میں کہا گیا تھا کہ شہری شام پانچ بجے سے رات آٹھ بجے تک گھروں سے نہیں نکل سکتے، پبلک ٹرانسپورٹ،ڈبل سواری اورعمومی کاروباری سرگرمیوں کی اجازت بھی نہیں ہوگی، خلاف ورزی پر سندھ وبائی امراض کنٹرول ایکٹ 2014 کے تحت کارروائی کی جائے گی۔

آن لائن کاروبار
آن لائن کاروبار

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply