imran khan

انتخابات ترقیاتی فنڈزسے نہیں، کارکردگی سے جیتیں گے ، عمران خان

Spread the love

انتخابات ترقیاتی فنڈز نہیں

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک میں ہر الیکشن

متنازعہ ہو جاتا ہے، کسی نے نہیں بتایا کہ ان متنازعہ انتخابات کو کیسے ٹھیک کرنا ہے، جو ہارتا

ہے وہ کہتا ہے دھاندلی ہوئی، ای وی ایم پاکستان کے سارے مسائل حل کر دے گی، کرپٹ نظام سے

فائدہ اٹھانے والے ای وی ایم کو مسترد کر رہے ہیں، کرپٹ نظام سے فائدہ اٹھانے والے چند افراد

شفاف انتخابات کیلئے رکاوٹ ہیں، اگلے 2 سال ہماری حکومت کیلئے بہت مشکل ہیں، الیکشن ترقیاتی

فنڈز نہیں، حکومتی کارکردگی سے جیتیں گے، ہماری حکومت کیلئے بہت ضروری ہے کہ آخری 2

سال ٹارگٹ سیٹ کریں، کرکٹ ٹیم میں 2 طرح کے کھلاڑی دیکھے، ایک باصلاحیت کھلاڑی ہوتے

تھے، دوسری قسم ایسے کھلاڑیوں کی تھی جو انتھک محنت کرتے تھے، مسلسل جدوجہد کرنیوالا ہی

زندگی میں کامیاب ہوتا ہے، زندگی میں جیت ہو یا ہار، اپنی کارکردگی کا جائزہ لیتے رہنا چاہیئے،

یقین ہے وزرا اپنے اہداف حاصل کرلیں گے۔ اسلام آباد میں پرفارمنس ایگریمنٹ پر دستخط کی تقریب

سے وزیراعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے 3 سالہ دورحکومت میں بہت مشکل

فیصلے کیے، ہم بہت مشکل وقت سے نکل کر آئے ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں الیکٹرانک ووٹنگ

مشین سیکوئی فائدہ نہیں ہوگا،مافیازملک میں اصلاحات نہیں چاہتے،سینیٹ کے 1500 ووٹ والے

الیکشن بھی متنازع رہے،ملک میں جوبھی ہارتا ہے وہ کہتا ہے دھاندلی ہوئی ہے۔ کسی نے نہیں بتایا

کہ متنازع انتخابات کوٹھیک کیسے کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کابینہ میں بہت سے وزرا مشکل وقت

میں گھبرائے، کرپٹ سسٹم سے فائدہ اٹھانے والے ای وی ایم کی مخالفت کررہے ہیں، ای وی ایم سے

بٹن دبانے سے فوری نتائج آجائیں گے۔ ای وی ایم پاکستان کیسارے مسائل حل کردیگی۔ وزیراعظم نے

کہا کہ ملک میں تمام انتخابات متنازع رہے، ہدف کے حصول میں مشکلات آنے پرہارمان جاتے ہیں،

یقین ہے وزرا اپنے اہداف حاصل کرینگے۔ وزیراعظم عمران خان نے تقریب سے خطاب کے دوران

کہاکہ زندگی میں جب تک آپ ہارنہیں مانتے آپ کوکوئی نہیں ہراسکتا، ٹارگٹ سیٹ کرنے کے بجائے

اس پرکوئی سمجھوتا نہ کریں، مسلسل جدوجہد کرنے والا ہی زندگی میں کامیاب ہوتا ہے۔ انہوں نے

کہا کہ اﷲ تعالی نے ملک کوبہت سی صلاحیتوں سینوازاہے،حکومت میں رہتے ہوئے ضروری ہے

کہ کارکردگی کاجائزہ لیں، اگلے 2 سال کیلئے ٹارگٹ سیٹ کرنے ہیں، رواں سال ہدف حاصل کرلیں

توآئندہ سال آسانی ہوگی۔ ہماری حکومت کیاگلے 2 سال مشکل ہیں۔وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے

کہا ہے کہ ہم ہر حال میں کشمیری عوام کی حمایت جاری رکھیں گے، بھارت دنیا میں بدنام ہو رہا ہے،

اب دنیا کو کشمیری عوام کا حق تسلیم کرنا پڑے گا اور انسانی حقوق کی پامالی کا نوٹس لیا جائے گا،

آزادکشمیر کی تعمیر و ترقی کیلئے فنڈز مہیا کیے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کو

یہاں وزیر اعظم ہاؤس اسلام آباد میں آزاد کشمیر کے صدر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری سے

تفصیلی ملاقات میں کیا۔ اس موقع پر وزیر اعظم پاکستان عمران خان اور صدر آزادکشمیر بیرسٹر

سلطان محمود چوہدری کے درمیان نیویارک میں ہونے والی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس

پر بھی بات چیت کی گئی۔ وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے صدر ریاست بیرسٹر سلطان محمود

چوہدری کوہدایت کی کہ وہ خود اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں مسئلہ کشمیرکو اجاگر کرنے میں

دلچسپی لیں۔ اس موقع پر ملاقات میں آزادکشمیر میں عدلیہ کے بحران کو حل کرنے پر بھی بات چیت

کی گئی۔ وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے کہا ہے کہ ہم ہر حال میں کشمیری عوام کی حمایت جاری

رکھیں گے اب جبکہ بھارت دنیا میں بدنام ہو رہا ہے اور اب دنیا کو کشمیری عوام کا حق تسلیم کرنا

پڑے گا اور انسانی حقوق کی پامالی کا نوٹس لیا جائے گا۔ آزادکشمیر کی تعمیر و ترقی کے لئے فنڈز

مہیا کیے جائیں گے۔ آزادکشمیر میں ہم بہتری کی توقع رکھتے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان سے

ورلڈکپ سکواڈ میں قومی ٹیم میں شامل کھلاڑیوں نے ملاقات کی ہے۔ملاقات میں موجودہ کرکٹ کی

صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا، ملاقات کے دوران چیئر مین پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) رمیز

راجہ نے بھی شرکت کی۔ملاقات سے قبل جب قومی کھلاڑی وزیراعظم ہاؤس پہنچے تو کھلاڑیوں نے

سفید قمیض شلوار اور گہرے نیلے رنگ کی ویسٹ کوٹ زیب تن کر رکھی تھی۔خیال رہے کہ چیئر

مین پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) چیئر مین رمیز راجہ نے ٹی 20 ورلڈکپ سکواڈ کا اعلان کیا

تھا، اعلان کردہ کھلاڑیوں میں بابر اعظم، شاداب خان، ا?صف علی، اعظم خان، حارث رؤف، حسن

علی، عماد وسیم، خوشدل شاہ، محمد حفیظ، محمد حسنین، محمد نواز، محمد رضوان، محمد وسیم،

شاہین شاہ آفریدی، صہیب مقصود شامل ہیں۔ وزیراعظم نے کھلاڑیوں سے اپنا کرکٹ کا تجربہ شئیر

کیا اور اس دوران کھلاڑیوں کا حوصلہ بڑھایا جب کہ وزیراعظم نے ہر کھلاڑی سے الگ الگ گفتگو

کی۔ وزیراعظم نے کھلاڑیوں کو میدان میں سر اٹھا کر رکھنے کی ہدایت کی اور کہا کہ کھلاڑیوں کے

کندھے گرے ہوئے دیکھتے ہیں تو بہت برا تاثر جاتا ہے، ہار جیت کھیل کا حصہ ہے، آخری گیند تک

ہار نہیں ماننی چاہیے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کھلاڑیوں کو جوش و جذبے کے ساتھ میدان میں کرکٹ

کھیلنی چاہیے اور مخالف کھلاڑی کو آؤٹ کرنے پر زیادہ مناسب خوشی منانی چاہیے۔وزیراعظم

عمران خان نے کھلاڑیوں کو لیکچر دیتے ہوئے کہا کہ کھلاڑی آخری دم تک لڑتا رہتا ہے اور ہار

نہیں مانتا، کسی بھی صورت اپنے آپ کو کمزور نہیں سمجھنا چاہیے، بھرپور ٹریننگ کریں، محنت

کریں اور 100 فیصد پرفارمنس دیں، ہمیشہ گراؤنڈ میں مثبت مائنڈ سیٹ کے ساتھ اتریں۔انہوں نے کہا

کہ اپنے دماغ سے دورہ نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کا معاملہ نکال دیں، اپنا فوکس ورلڈکپ پر مرکوز

رکھیں۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کھلاڑیوں نے کو 92 کے ورلڈکپ کی کہانی بھی سنائی اور

کہاکہ 92 کے ورلڈکپ میں دنیا کو لگتا تھا کہ ہم اگلے راؤنڈ میں نہیں پہنچ سکیں گیلیکن ہم ورلڈکپ

جیت گئے۔وزیراعظم نے کھلاڑیوں کوگراؤنڈ میں جارحانہ حکمت عملی اپنانیکا مشورہ دیا اور تمام ٹیم

کو اتفاق و یکجہتی سے کھیلنے کی ہدایت دی۔انہوں نے کہا کہ صرف اور صرف پاکستان کے لیے

کھیلیں اور نتیجہ اﷲ پر چھوڑ دیں، کامیابی کا راستہ سچائی اور ایمانداری کا راستہ ہے، انسان کوشش

اور محنت سے اپنی تقدیر بدل سکتا ہے، ایک راستہ عزت کا ہے اور دوسرا پیسے کا، آپ کو پیسے

کے بت کو توڑنا ہے، ٹیم اور قوم کیلئے کھیلنا ہے، پوری قوم کی نظریں آپ پر ہیں۔ وزیراعظم کا کہنا

تھا کہ آپ دنیا میں پاکستان کے نمائندے اور سفیر ہیں، ہمارے پاس ٹیلنٹ کی کمی نہیں، پوری دنیا

پاکستانیوں کے ٹیلنٹ کو تسلیم کرتی ہے، میدان میں اتریں تو خود اعتمادی اور جیتنے کے جذبے سے

اتریں، وہ ٹیم کبھی نہیں جیتتی جو ہار سے بچنے کیلئے کھیلے، میں جب کھیلتا تھا تو ہم نے کرکٹ کو

برے حالات سے نکال کر ورلڈکپ جیتا۔انہوں نے کہا کہ ہم نے ہی کرکٹ میں اٹیکنگ ٹیکنیک کو

متعارف کرایا، ٹیم کو اعصابی طور پر مضبوط کریں، پریشر میں پریشان ہونیکی بجائے لطف اندوز

ہونا سیکھیں، وکٹ لینے پر کام کریں، رن روکنا اور وکٹ لینا دو علیحدہ ٹیکنیک ہیں، محنت سے ایک

مضبوط ٹیم بنیں، پوری قوم کی آپ سے امیدیں وابستہ ہیں وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملکی

معاشی ترقی میں سڑکوں کا اہم ترین کردار ہے۔ معیاری سڑکوں کی تعمیر سے روزگار کے مواقع

بڑھیں گے۔وزیراعظم عمران خان کی صدارت میں نیشنل ہائی وے اتھارٹی (این ایچ اے) کے

منصوبوں پر پیشرفت کا جائزہ لیا گیا۔وزیراعظم کو راولپنڈی تا کھاریاں، میانوالی تا مظفرگڑھ اور

حیدرآباد تا سکھر شاہراؤں پر پیشرفت کی تفصیلی بریفنگ دی گئی۔وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید

نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ سابقہ دورحکومت کے 3 سالوں میں 645 کلومیٹر کی سڑکیں تعمیر

ہوئیں۔ موجودہ حکومت کے 3 سالوں میں کل 1753 کلومیٹر لمبائی کی سڑکیں مکمل ہو چکی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کے 3 سالوں کے دوران 6118 کلومیٹر لمبائی پر مشتمل سڑکوں کی

منصوبہ بندی مکمل کی گئی، مالی سال میں نیشنل ہائی وے اتھارٹی 27 منصوبے مکمل کر لے گی،

بلوچستان میں 3 ہزار کلومیٹر سے زیادہ کی سڑکیں تعمیر کی جا رہی ہیں۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ

معاشی ترقی میں سڑکوں کا اہم ترین کردار ہے، معیاری سڑکوں کی تعمیر سے دیہی اور شہری

علاقوں کے درمیان رابطہ، تجارت اور روزگار کے مواقع بڑھیں گے

انتخابات ترقیاتی فنڈز نہیں
انتخابات ترقیاتی فنڈز نہیں
انتخابات ترقیاتی فنڈز نہیں

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply