امریکہ نے دوران جنگ چُرایا گیا 3500 سال پرانا کتبہ عراق کو واپس کر دیا

امریکہ نے دوران جنگ چُرایا گیا 3500 سال پرانا کتبہ عراق کو واپس کر دیا

Spread the love

واشنگٹن، بغداد (جے ٹی این آن لائن دلچسپ و عجیب نیوز) امریکہ کتبہ عراق واپس

سرزمین عراق میں ایک قدیم بادشاہ کی لائبریری کے کھنڈرات سے دریافت

ہونیوالی 3500 سال پرانی مٹی کی تختی جس کی قیمت 1.7 ملین ڈالر بتائی جاتی

ہے جسے امریکہ کے حکام نے 30 سال قبل عراق میں صدام حسین کے خلاف

جنگ کے دوران ایک قومی عجائب گھر سے چُرا لیا تھا، اسے بالآخر امریکہ

کے دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں ایک تقریب وہ قدیم تختی عراقی حکومت

کو واپس کر دی گئی۔

=–= ایسی ہی مزید دلچسپ و عجیب خبریں =–= پڑھیں =–=

امریکہ کتبہ عراق واپس

ماہرین آثار قدیمہ کے مطابق یہ ایک قدیم بادشاہ کی لائبریری کے کھنڈرات میں

دریافت ہونے والی 3500 سال پرانی مٹی کی تختی ہے۔ 1.7 ملین ڈالر مالیت کی

یہ تختی 1853ء میں قدیم بادشاہ کی لائبریری سے ملنے والی 12 تختیوں کے

ذخیرے کا حصہ ہے۔ عہدیداروں کے مطابق اسے 2003ء میں غیر قانونی طور

پر امریکہ میں درآمد کیا گیا تھا۔ پھر اسے ہابی لابی کو فروخت کیا گیا اور بالآخر

اسے ملک کے دارالحکومت میں بائبل کے میوزیم میں نمائش کے لیے پیش کیا

گیا۔ ہوم لینڈ سیکورٹی انویسٹی گیشنز کے ساتھ وفاقی ایجنٹوں نے گلگیمش ڈریم

ٹیبلٹ نامی تختی کو ستمبر 2019ء میں میوزیم سے ضبط کر لیا تھا۔ کئی مہینوں

بعد نیو یارک میں وفاقی پراسیکیوٹرز نے سول ضبطی کی عدالتی کارروائی

شروع کی جس کے نتیجے میں عدالت نے تختی کو لوٹانے کا فیصلہ کیا۔

=یہ بھی پڑھیں= دنیا کا سب سے بڑا مگر متنازعہ نوادرات سے سجا میوزیم

گزشتہ ماہ بھی امریکہ نے17 ہزار قدیم نوادرات عراق کو واپس کی تھیں۔ چوری

کی گئی نوادرات میں قدیم عراقی تہذیب کی ہزاروں اشیاء بھی شامل ہیں۔ امریکہ

نے چوری کردہ نوادرات کو غیر قانونی خریداروں سے بازیاب کیا تھا۔ تاریخی

اشیاء 2003ء عراق جنگ کے بعد چوری کر کے سمگل کر دیا گیا تھا، عراق

میں ہزاروں قیمتی نوادرات کو داعش نے تباہ کر دیا تھا۔ جن میں سے ہزاروں اب

بھی لاپتہ ہیں۔ نوادرات کی واپسی امریکہ کی جانب سے قیمتی اثاثوں کو ان کے

آبائی ممالک کو واپس پہنچانے کی ایک کوشش کا حصہ ہے، اس سے قبل ایسی

اشیا کبھی واپس نہیں کی گئیں، کیونکہ ان آثار قدیمہ کی بلیک مارکیٹ بہت وسیع

ہے۔ حکام نے ایک سمیرین رام کے مجسمے کے ساتھ دیگر نوادرات بھی واپس

کی ہیں جو ایک الگ کیس کے دوران ضبط کیا گیا تھا۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ

مجسمہ 3000ء قبل مسیح سے مندروں میں مذہبی عبادات کے لیے استعمال کیا

جاتا تھا۔ تفتیش کاروں کے مطابق اسے جنوبی عراق میں ایک آثار قدیمہ سے

چوری کیا گیا تھا۔

امریکہ کتبہ عراق واپس ، امریکہ کتبہ عراق واپس ، امریکہ کتبہ عراق واپس

امریکہ کتبہ عراق واپس ، امریکہ کتبہ عراق واپس

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply