امارات ترکی ایران سے دوستی پر تیار، ریاض تہران میں مذاکرات کی تصدیق

امارات ترکی ایران سے دوستی پر تیار، ریاض تہران میں مذاکرات کی تصدیق

Spread the love

دبئی، ریاض (جے ٹی این آن لائن انٹرنیشنل نیوز) امارات ترکی ایران سے

متحدہ عرب امارات نے کہا ہے خطے میں ایران اور ترکی کیساتھ طویل عرصے

سے جاری رقابتوں کو اب مذاکرات کے ذریعے سلجھانے کا وقت آ گیا ہے تاکہ

خطے میں کوئی اور نئے ٹکرﺅا کی صورت پیدا ہونے سے بچا جا سکے۔میڈیا

رپورٹس کے مطابق دبئی میں ایک پریس کانفرنس میں متحدہ عرب امارات کے

صدر کے سفارتی مشیر اور وزیرخارجہ انور قرقاش نے کہا کہ موجودہ حالات

کے پیش نظر اب پالیسیوں پر از سر نو غور کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک طرف

خطے سے متعلق امریکہ کے جو عزائم ہیں وہ غیر یقینی صورتحال کا شکار ہیں

اور دوسری طرف واشنگٹن اور بیجنگ کے مابین سرد جنگ کے جو خطرات

منڈلا رہے ہیں اس پر بھی کافی تشویش پائی جاتی ہے۔ انور قرقاش نے مزید کہا

کہ خطے میں امریکہ کی موجودگی کے حوالے سے ہم آنیوالے دور میں دیکھیں

گے کہ واقعی کیا ہوتا ہے۔

=-= دنیا بھر سے مزید تازہ ترین خبریں ( =–= پڑھیں =–= )

انور قرقاش نے کہا ہمیں نہیں لگتا کہ ابھی تک کچھ معلوم ہے، لیکن افغانستان

کی صورت حال یقینی طور پر ایک آزمائش ہے، ایمانداری سے کہیں تو یہ ایک

بہت پریشان کن امتحان ہو گا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہمیں اپنے علاقے کو بہتر

طور پر منظم کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک خلا پایا جاتا ہے اور جب بھی کوئی

خلا ہوتا ہے تو وہاں پریشانی بھی پائی جاتی ہے۔ انور قرقاش کا کہنا تھا کہ ترکی

نے حالیہ عرصے میں مصر، اخوان المسلمین، سعودی عرب اور دیگر کے بارے

میں اپنی پالیسیوں کا جو از سر نو جائزہ لیا ہے، وہ بہت خوش آئند ہے۔ اور میں

سمجھتا ہوں کہ ہمارے لیے درمیانی راستے تک جانا اور پہنچنا بہت ضروری

ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم ترکی سے جو کچھ بھی کہہ رہے ہیں اس کے بارے

میں ان کا رویہ بہت مثبت رہا ہے۔

=-،-= میں ایران کے بارے میں بہت مثبت ہوں، انور قرقاش

کیا میں ایران کے بارے میں بہت مثبت ہوں؟ ہاں میں ہوں۔ کیا میں بہت زیادہ

مثبت ہوں کہ ایران علاقے سے متعلق اپنی پالیسی تبدیل کریگا؟ اس پر مجھے

کہنا ہے کہ میں یہاں زیادہ حقیقت پسند ہوں، لیکن میں یہ شرط کے ساتھ کہہ سکتا

ہوں کہ ایران بھی پائے جانیوالے خلا اور کشیدگی کے تئیں فکر مند ہے۔ قرقاش

کا کہنا تھا کہ وبائی امراض نے سیاسی ترجیحات کو پیچھے رکھ کر دیگر مقاصد

کو سب سے آگے کر دیا ہے، اور اب ایک اہم اور بڑی تشویش امریکہ اور چین

کے درمیان پھنسنے کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ سر پرمنڈلانے والے سرد جنگ

کے خدشات سے ہم سبھی پریشان ہیں۔ یہ ہم سب کیلئے بری خبر ہے، کیونکہ بین

الاقوامی نظام میں انتخاب کا خیال بڑا مشکل ہوتا ہے اور میرے خیال میں یہ سفر

آسان نہیں ہو گا۔

=-،-= ایران کیساتھ بات چیت کو سود مند بنائیں گے، سعودی عرب

سعودی عرب نے تصدیق کی ہے کہ اس کی گزشتہ ماہ ایران کی نئی حکومت

کے ساتھ پہلے دورکے براہ راست مذاکرات ہوئے تھے۔ سعودی وزیر خارجہ نے

امید ظاہر کی ہے کہ یہ بات چیت دونوں ملکوں کے باہمی مسائل کو حل کرنے

کی بنیاد فراہم کرے گی۔ میڈیارپورٹس کے مطابق سعودی وزیر خارجہ شہزادہ

فیصل بن فرحان السعود نے بتایا کہ بات چیت کا تازہ ترین دور 21 ستمبر کو ہوا،

تاہم انہوں نے ملاقات کا مقام نہیں بتایا۔ اسی تاریخ کو ایرانی صدر ابراہیم رئیسی

نے نیویارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کیا تھا۔ انہوں نے کہا

کہ یہ بات چیت ابھی تک ابتدائی مرحلے میں ہے۔ ہمیں امید ہے کہ یہ دونوں

فریقوں کے درمیان مسائل کو حل کرنے کے لیے ایک بنیاد فراہم کرے گی اور ہم

اسے سود مند بنانے کی کوشش کریں گے۔

امارات ترکی ایران سے ، امارات ترکی ایران سے ، امارات ترکی ایران سے

امارات ترکی ایران سے ، امارات ترکی ایران سے ، امارات ترکی ایران سے

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply