تاریخ میں پہلی بار اسرائیلی طیارہ وفد لیکرعرب امارات پہنچ گیا

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ابوظہبی،تل ابیب (جے ٹی این آن لائن نیوز ) اسرائیلی طیارہ عرب امارات

سعودی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت ملنے کے بعد تاریخ میں پہلی

مرتبہ اسرائیل کا مسافر طیارہ متحدہ عرب امارات میں لینڈ کر گیا ہے۔اسرائیلی

پرواز صہیونی اور امریکی حکام کو لے کر متحدہ عرب امارات پہنچی ہے۔ وفد

میں امریکی صدر ٹرمپ کے داماد جیرڈ کشنر بھی شامل ہیں۔ خیال رہے کہ یہ

موقع دونوں ملکوں کے درمیان رواں ماہ ہونے والے امن معاہدے کے بعد دیکھنے

کو ملا ہے۔ اس پرواز کو ’’ایل وائی 971‘‘کا نام دیا گیا ہے۔اسرائیلی ایئرلائن ’’ال

آل‘‘کی پرواز دارالحکومت تل ابیب سے تین گھنٹے کا فضائی سفر طے کرکے

متحدہ عرب امارات پہنچی۔ اس پرواز کو یو اے ای کا سفر کرنے کیلئے خصوصی

طور پر سعودی عرب کی فضائی حدود کو استعمال کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔

دوسری طرفاسرائیلی وزیر اعظم نے کہاہے کہ سفارتی تعلقات کے قیام کے لیے

مزید کئی عرب ریاستوں کے ساتھ خفیہ مذاکرات جاری ہیں۔میڈیارپورٹس کے

بچوں کیلئے میٹھا زہر، نوجوانوں کو اندر سے کھوکھلا کرنیوالے مشروبات

مطابق اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ عرب اور مسلم ممالک کے رہنمائوں

کے ساتھ کئی ایسی ملاقاتیں یا تو ہو رہی ہیں یا ہونے والی ہیں، جن کی تفصیلات

عام نہیں کی گئیں۔اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو کی کابینہ کے ایک رکن

نے کہا ہے کہ اسرائیل کو متحدہ عرب امارات سے تعلقات کی بحالی کی تقریب

اور معاہدے پر دستخط ستمبر کے وسط میں ہونے کی امید ہے۔خبر رساں ایجنسی

رائٹرز کے مطابق اسرائیل کے علاقائی تعاون کے وزیر اوفیر اکونیس نے کہا کہ

اس طرح کی تقریب کی تاریخ کا فیصلہ اس وقت ہوگا جب نیتن یاہو اور امریکی

صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے قریبی ساتھی ابوظہبی میں مذاکرات کے لیے ملاقات کریں

گے۔ دبئی اور ابوظہبی کے دھماکوں سے ایک شخص جاں بحق اور متعدد افراد

زخمی ہو گئے۔غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ابوظہبی اور دبئی کے 2

مختلف ریسٹورنٹس میں دھماکے ہوئے۔ زخمیوں کو فوری طور پر قریبی اسپتالوں

میں منتقل کر دیا گیا۔پولیس نے علاقے کو گھیرے میں لے کر ملزمان کی تلاش

شروع کر دی۔

اسرائیلی طیارہ عرب امارات

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply