97

نواز شریف کیلئے جیل میں لائف سیونگ یونٹ قائم ،بلاول کل ملاقات کرینگے

Spread the love

اسلام آباد(نمائندہ خصوصی ،کرائم رپورٹر،آئی این پی)پنجاب حکومت نے سابق

وزیر اعظم محمد نواز شریف کیلئے کوٹ لکھپت جیل میں لائف سیونگ یونٹ قائم

کر دیا ، پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کے ڈاکٹرز اورٹیکنیشنز تین شفٹوں

میںفرائض سر انجام دیں گے جبکہ کسی بھی ایمر جنسی کی صورت میں فوری

طبی امداد کیلئے ہر طرح کی سہولیات سے مزین یونٹ پر مشتمل ایمبولینس بھی

موجود رہے گی ۔پنجاب حکومت کے ترجمان ڈاکٹر شہباز گل نے پی آئی سی میں

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیرا علیٰ پنجاب کی ہدایت پر نواز شریف

سے خود ملا ہوں او رانہیں قانون کے مطابق ہر ممکن علاج کی یقین دہانی کرائی

ہے۔ آٹھ مارچ کو نواز شریف کو علاج معالجے کی پیشکش سے متعلق تحریری

بھی لکھا جا چکا ہے ۔دوسری طرف سابق وزیراعلیٰ پنجاب اور اپوزیشن لیڈر

قومی اسمبلی شہباز شریف نے کوٹ لکھپت جیل میں اپنے بڑے بھائی نواز شریف

سے ملاقات کے بعد اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے

علاج کے نام پر نواز شریف کے ساتھ کھلواڑ کیا اور اس دوران حکومت نواز

شریف کے ساتھ ہسپتال ہسپتال کھیلتی رہی۔ شہباز شریف کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان

کے علاج کے لئے بنائے گئے ڈاکٹروں کے بورڈ میں شامل بعض ڈاکٹرز کا کہنا

تھا کہ حکومت کی جانب سے انہیں ہدایات تھیں کہ صرف نواز شریف کی بیماری

کا پتہ چلایا جائے۔ ان کا علاج شروع نہ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نواز

شریف کی بیماری پر نہ صرف نواز شریف سے انتقام لے رہی ہے بلکہ بیماری پر

سیاست بھی کر رہی ہے جو انتہائی قابل افسوس بات ہے۔ چیئرمین پیپلز پارٹی

بلاول بھٹو کو نواز شریف سے جیل میں ملاقات کی اجازت مل گئی، بلاول بھٹو

(کل)پیر کو نوازشریف سے ملاقات کریں گے،پنجاب حکومت نے سابق وزیر اعظم

محمد نواز شریف کیلئے کوٹ لکھپت جیل میں لائف سیونگ یونٹ قائم کر دیا ۔

تفصیلات کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب نے پیپلزپارٹی کو اجازت سے متعلق آگاہ

کردیا ہے۔ترجمان وزیراعلی پنجاب شہبازگل نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو نواز شریف

سے ملاقات کرنا چاہتے ہیں تو ملنے دیاجائے گا، جیل قوانین اور مینول کے مطابق

ملنے دیا جاسکتا ہے، پنجاب حکومت کو اس ملاقات پر کوئی اعتراض نہیں ہے،

پنجاب حکومت نے محکمہ داخلہ کو ہدایت کر دی ہے۔ذرائع نے کہا بلاول بھٹو پیر

کے روز کوٹ لکھپت جیل میں نوازشریف سے ملاقات کریں گے، وقت کی کمی

کے باعث بلاول بھٹو ہفتہ کو نوازشریف سے ملاقات نہیں کرسکے۔برطانوی

ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کی حالت انتہائی تشویشناک

ہے، انھیں فوری طور پرایسے اسپتال میں منتقل کیا جائے جہاں دل کے علاج کی

مکمل اور جدید سہولتیں موجود ہوں۔ذرائع کے مطابق نواز شریف کی تازہ ترین

میڈیکل رپورٹس لندن کے ہارلے سٹریٹ اسپتال اور دیگر ماہر ڈاکٹرز کو بھجوائی

گئی تھی۔رپورٹس کی روشنی میں ڈاکٹروںکے پینل کا کہنا ہے کہ نواز شریف کی

پیچیدہ میڈیکل ہسٹری کے پیش نظر ان کا علاج دل کے امراض کے جدید ہسپتال

میں ہونا چاہئے تاکہ ایک ہی جگہ تمام سہولیات مہیا کی جاسکیں۔ڈاکٹروں کا کہنا

ہے کہ نواز شریف کے علاج میں تاخیر ان کیلئے انتہائی خطرناک ہے جبکہ نواز

شریف کا علاج برطانیہ یا کسی دیگر ترقی یافتہ ملک کے ایڈوانس کارڈیک یونٹ

میں بہتر طریقے سے ممکن ہے۔ذرائع کے مطابق جیل میں ہونے کے باعث نواز

شریف کو تازہ ہوا نہیں مل رہی اور ان کے دل کی شریانوں میں خون کی روانی

متاثر ہورہی ہے۔ڈاکٹروں نے خدشہ ظاہرکیا ہے کہ ان کے دل کا عارضہ بڑھ سکتا ہے اور دل کو ناقابل تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے۔
برطانوی ڈاکٹر