120

کالعدم تنظیموں کیخلاف کارروائیاں،مزید 121گرفتار، 300 مدارس،سکول،ہسپتال کا کنٹرول سنبھال لیا گیا

Spread the love

اسلام آباد،لاہور،مرید کے(جے ٹی این آن لان نامہ نگاران) وزارت داخلہ کے حکم
پرکالعدم تنظیموں کے خلاف کارروائیاں تیز کر دی گئیں۔ ملک بھر سے مزید 121
افراد کو گرفتار جبکہ 300 مدارس، سکولوں، ہسپتالوں اور ڈسپنسریوں کا کنٹرول
صوبائی حکومتوں نے سنبھال لیا۔

محکمہ داخلہ سندھ کے نوٹیفکیشن کے مطابق صوبے میں 31 سکول، 16 مدارس،9
ہسپتال تحویل میں لئے گئے ہیں۔ ان کا انتظام اب تعلیم، صحت اور اوقاف کے محکمے
چلائیں گے۔ یہ ادارے کراچی، حیدرآباد، مٹیاری، جامشورو، سانگھڑ، بدین اور دیگر
شہروں میں قائم ہیں۔

نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد میں تیزی لاتے ہوئے حکومت پنجاب نے کالعدم تنظیم
جماعت الدعوۃ اور فلاح انسانیت فاؤنڈیشن کے ہیڈ کوارٹرز کا کنٹرول سنبھال لیا۔

دونوں جماعتوں کے ہیڈ آفس کا کنٹرول سنبھالنے کی محکمہ داخلہ پنجاب نے تصدیق
کرتے ہوئے کہا ہے کالعدم جماعتوں کی مزید جائیدادوں کو بھی ضبط کرنے کی کارروائی
جاری ہے جبکہ قبضے میں لئے تمام سکولز اور ادارے چلتے رہیں گے۔

پنجاب حکومت کی کارروائی کے دوران ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو شیخوپورہ سید موسی
رضا نے جماعۃ الدعوۃپاکستان کے8 اداروں کو سرکاری تحویل میں لے کر سرکاری ایڈمنسٹریٹر
مقرر کر دیئے،

تنویر وڑائچ کی جگہ سرفراز باجوہ کو مرکز جماعۃ الدعوۃ مرید کے کا چیف ایڈمنسٹریٹر،
تحصیلدار مریدکے شرجیل فاروقی کو انچارج کیٹل فارم، فش فارم، گھوڑوں کا اصطبل، کچن،
گندم سٹور مقرر کیا گیا ہے۔

ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسر ایجوکیشن تحصیل مریدکے عذرا پروین کو گورنمنٹ المنھل گرلز ہائی سکول،
صفہ اکیڈمی فار گرلز،جامعہ معاذبن جبل فار گرلز۔ ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسر ایجوکیشن مریدکے کو اسلامیہ صفہ ایجوکیشنل سنٹر، جامعہ معاذبن جبل فار بوائز، مسجد ام القریٰ، الدعوۃ ہائی سکول کا ایڈمنسٹریٹر تعینات کیا گیا ہے۔

تحصیل ہیڈ کوارٹر اسپتال مریدکے کے سینئر ڈاکٹر محمد سلیم کو العزیز ہسپتال ننگل ساہداں تھانہ صدر مرید کے کا ایڈمنسٹریٹر مقرر کردیا گیا ہے جنہوںنے تمام شعبو ں کا چارج سنبھال کر کام شروع کر دیا۔۔

ادھر ترجمان وزیراعظم ندیم افضل چن نے کہا ہے وزیراعظم نے کالعدم تنظیموں کیخلاف نیشنل
ایکشن پلان کی روشنی میں کارروائی کا فیصلہ کیا ۔

کالعدم جماعتوں کیخلاف کارروائی نیشنل ایکشن پلان کی رہنمائی میں کی جائے گی اور اس اہم معاملے میں اپوزیشن سمیت تمام شراکت داروں کو اعتماد میں لیا جائیگا۔