60

’’میں نے تمہارا کیا بگاڑا ہے؟” عالم اسلام کی بڑی شخصیت کے آخری الفاظ

Spread the love

واشنگٹن (جے ٹی این آن لائن نیوز) میں نے کیا بگاڑا

لیبیا کے سابق صدر معمر قذافی کے قتل کے وقت کیا الفاظ تھے؟ خفیہ میل سامنے

آگئی، جس وقت لیبیا کے سابق صدر معمر قذافی کو قتل کیا گیا اس وقت ان کی

زبان پر یہ الفاظ تھے کہ ’’میں نے تمہارا کیا بگاڑا ہے؟‘‘حال ہی میں سامنے

آنیوالی پرانی خفیہ ای میلز دیکھ کر معلوم ہوتا ہے معمر قذافی کو اسلئے بیدردی

سے قتل کیا گیا کیونکہ فرانس افریقی ممالک میں اپنی مالی دھاک برقرار رکھنا

چاہتا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: لیبیا کے سابق مرد آہن کرنل قذافی زندہ ،سینیگال کی ویب سائٹ کا دعویٰ

سابق امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کی 2016ء میں سامنے آنیوالی خفیہ ای

میلز کا حصہ محکمہ خارجہ نے جاری کیا ہے۔ جاری کردہ ای میلز کی تعداد 3

ہزار ہے۔ ان خطوط کو پڑھ کر معلوم ہوتا ہے کہ ان میں اس بات کے ٹھوس ثبوت

موجود ہیں کہ مغربی ممالک نے نیٹو کو معمر قذافی کی حکومت کا تختہ الٹنے

کیلئے استعمال کیا۔ نیٹو کی جانب سے قذافی کا تختہ الٹنا عوام کی فلاح کیلئے کیا

جانیوالا اقدام نہیں تھا بلکہ اس کا مقصد قذافی کو سونے کی بنیاد پر افریقی خطے

میں فرانسیسی اور یورپی کرنسی کی طرح مقامی مشترکہ کرنسی متعارف کرانے

سے روکنا تھا کیونکہ ایسا ہونے کی صورت میں مغربی مرکزی بینکاری کی

اجارہ داری ختم ہونے کا خدشہ تھا۔

’’فرانس کا کلائنٹ اور قذافی کا سونا‘‘

اپریل 2011ء میں ہلیری کلنٹن کو ان کے مشیر اور ان کے دیرینہ ساتھی سڈنی

بلومینتھل نے ’’فرانس کا کلائنٹ اور قذافی کا سونا‘‘ کے عنوان سے ای میل

بھیجی جس میں واضح طور پر مغربی ممالک کے بہیمانہ ارادوں کا احاطہ کیا گیا

تھا۔ ای میل میں تھا کہ فرانس کی قیادت میں نیٹو افواج نے لیبیا میں کارروائی

شروع کی ہے جس کا بنیادی مقصد لیبیا کے تیل کا زیادہ سے زیادہ حصہ حاصل

کرنا اور ساتھ ہی قذافی کے اس دیرینہ منصوبے کو ناکام بنانا تھا جس کے تحت وہ

افریقہ میں فرانس کے زیر تسلط علاقوں (Francophone Africa) میں اپنا غلبہ

قائم چاہتے ہیں۔

فرانسیسی صدر نکولس سرکوزی لیبیا
پر حملے کے خواہوں میں سرفہرست

فارن پالیسی جرنل کا بھی اس حوالے سے کہنا ہے کہ ای میل میں سابق فرانسیسی

صدر نکولس سرکوزی کو لیبیا پر حملہ کرنے کے خواہشمندوں میں سر فہرست

بتایا گیا ہے۔ اس ای میل میں پانچ بنیادی مقاصد ذہن میں رکھنے کیلئے کہا گیا، ”

لیبیا کا تیل حاصل کرنا، خطے میں فرانس کا اثر رسوخ برقرار رکھنا، ملک میں

داخلی سطح پر نکولس سرکوزی کی ساکھ بہتر کرنا، فرانسیسی عسکری قوت کو

اجاگر کرنا اور قذافی کے افریقی خطے میں اثر رسوخ بڑھانے کو روکنا۔

ٹرمپ تعریف نہیں کرتے مودی کو ”جگتیں” مارتے ہیں، بھارتی میڈیا

اس حوالے سے قذافی کے طویل عرصہ تک ترجمان رہنے والے شخص موسیٰ

ابراہیم نے روسی ٹی وی کے پروگرام ’’گوئنگ انڈرگرائونڈ‘‘ کو انٹرویو دیتے

ہوئے کہا معمر قذافی کو اسلئے راستے سے ہٹایا گیا کیونکہ وہ افریقہ سے غیر

ملکی استحصال کا خاتمہ کرنا چاہتے تھے۔ نیٹو کی بمباری کی وجہ سے ایسے

تمام گروپس جنہیں کنٹرول میں رکھا گیا تھا وہ کھل کر باہر آ گئے اور انہوں نے

لیبیائی قوم کا ایک خواب چکنا چور کر دیا، یہ خواب اور اس کیلئے منصوبہ

دہائیوں کی نو آبادیاتی اور اس کے بعد کے نظام کو دیکھ کر اور تجربات حاصل

کرکے مرتب کیا گیا تھا۔

انہوں نے کہا ان لوگوں کا کام ملکوں میں جنگوں کے ذریعے افراتفری، داخلی

تنازعات، مذہبی تقسیم اور قبضے کو پھیلانا ہے۔ اس کے بعد آپ افراتفری کو

بڑھاتے جائیں، بحران کو کنٹرول کرنے کے راستے مل ہی جاتے ہیں۔

In Libya, President Mandela visits with leader Moammar Kadafi in 1997.

میں نے کیا بگاڑا