75

چونیاں میں 4 بچوں کے قاتل کو گرفتار کر لیا ، کیس انسداد دہشت گردی عدالت میں چلے گا،عثمان بزدار

Spread the love

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک،جنرل رپورٹر)وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے کہا

ہے کہ چونیاں میں بچوں کے ساتھ پیش آنے والے افسوسناک واقعہ کے ملزم کو

گرفتار کر لیا گیا ، ایک بچے کی لاش اور تین بچوں کی ہڈیوں سے ڈی این اے

کے ذریعے ملزم سہیل شہزاد ولد اسلم کو شناخت کیا گیا۔ان خیالات کا اظہار انہوں

گزشتہ روز ایک پریس کانفرنس میں کیا۔وزیراعلیٰ نے بتایا کہ1649 مشکوک افراد

کی جیوفینسنگ کی گئی جبکہ 1543 مشکوک افراد کے ڈی این اے ٹیسٹ کئے

گئے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ 27 سالہ ملزم کے خلاف کیس انسداد دہشت گردی کی

عدالت میں چلے گا- کیس کی روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہو گی- تمام قانو نی

تقاضے پورے کئے جا رہے ہیں -پراسیکیوٹرجنرل کو ہدایت کر دی گئی ہے کہ وہ

خودکیس کی پیروی کریں گے- میں خود ذاتی طور پر کیس پر ہونے والی پیشرفت

کا جائزہ لوں گا، غمزدہ خاندانوں کو انصاف کی فراہمی میں کوئی کسر اٹھا نہ

رکھیں گے۔انہوں نے کہا کہچونیاں کو سیف سٹی پراجیکٹ سے منسلک کرنے کا

حکم دے دیا جبکہ چونیاں میں سپیشل برانچ کی نفری میں اضافہ کیا جا رہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ قصور میں چائلڈ پروٹیکشن سنٹر بنایا جائے گا تاکہ آئندہ ایسے

واقعات کی روک تھام کے لئے موثر قانون سازی کی جائے گی۔وزیراعلیٰ پنجاب

نے کہا کہسوگوار خاندانوں کو انصاف کی فراہمی کا وعدہ کیا تھا جسے پورا کریں

گے۔نہوں نے کہا کہ ملزم کی گرفتاری میں پولیس ، پنجاب فرانزک سائنس ایجنسی

، سپیشل برانچ،پرنسپل سیکرٹری وزیر اعلی آفس ، کابینہ کمیٹی امن و امان اور

دیگر اداروں نے بہت محنت کی ہے ، میں سب کو شاباش دیتا ہوں۔ ایک سوال کے

جواب میں وزیر اعلی نے بتایا کہ پولیس اصلاحات میں کوئی ڈیڈ لاک نہیں ،

جیسے ہی سفارشات فائنل ہوئیں اسے آپ کے سامنے پیش کیا جائے گا-ایک اور

سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وزراء کی کارکردگی کا جائزہ لیا جا رہا ہے

جو کچھ کرنا ہے ہم خود کریں گے -قصور میں ہونے والے ایسے واقعات کی

سٹڈی کروائی جائے گی،پنجاب حکومت نے ساہیوال واقعہ، صلاح الدین کیس اور

چونیاں کے واقعہ پر بروقت کارروائی کی ۔ سانحہ ساہیوال میں ملوث افسران کے

خلاف کارروائی ہوئی اور ایف آئی آر درج کی گئی، اب قانو ن کے مطابق

کارروائی چل رہی ہے۔ صلاح الدین کے خاندان کے مطالبے پر دوبارہ قبر کشائی

کی گئی،کوئی کام قانون سے بالا نہ کرتا ہوں نہ کوئی کرے گا۔صلاح الدین کیس پر

جوڈیشل کمیشن بنانے کیلئے ہائی کورٹ کو خط لکھ دیا ہے ۔وزیر صحت ڈاکٹر

یاسمین راشد کے بارے میں سوال کے جواب میں وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار کا

کہنا تھا کہ وزیر صحت کی کارکردگی کے حوالے سے فیصلہ آپ (صحافی) نے

نہیں میں نے کرنا ہے۔رحیم یار خان میں قتل ہونے والے صلاح الدین کیس کے

بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ اس کیس میں قانون

سے ہٹ کر کچھ نہیں کر سکتے، کیس میں خود جج بن کرسزا نہیں دے سکتا۔قبل

ازیںانسپکٹر جنرل پولیس عارف نواز نے میڈیا کو بتایا کہ ملزم سہیل شہزاد رانا

ٹاؤن کا رہائشی ہے – ملزم نے جون 2019ء میں بارہ سالہ علی عمران سے

بداخلاقیکی اور گلاگھونٹ کر قتل کیا- اگست میں ملزم نے دو مزید بچوں

کوبداخلاقی کے بعد قتل کیا، ملزم غیر شادی شدہ اور تندور پر روٹیاں لگاتا ہے

جبکہکچھ عرصہ قبل ملزم سہیل شہزاد گرفتار ہوا اور اسے پانچ سال کی سزا ہوئی

اور ڈیڑھ سال کی سزا کاٹ کر ملزم جیل سے باہر آگیا ، ملزم کو چونیاں سے

گرفتار کیا گیا