Islamabad, Prime Minister Imran Khan addressing with Seminar at central hall. 76

وزیراعظم عمران خان نے کشمیریوں کی مدد جہاد، خود کو انکا سفیر قراردیدیا

Spread the love

اسلام آباد،نیویارک (جے ٹی این آن لائن سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک)

وزیراعظم عمران خان نے ایک بار پھرواضح کیا ہے کہ کوئی ہو نا ہو پاکستان

اپنے کشمیری بھائیوں کیساتھ کھڑا ہے، یہ ایک جہاد ہے جدو جہد میں اونچ نیچ

آتی ہے، کشمیری انشاء اللہ اپنی جنگ آزادی جیتیں گے، نریندر مودی کی

فاشسٹ اور مسلمانوں سے نفرت کرنیوالی حکومت کو ہر فورم پر بے نقاب

کریںگے۔ اتوار کو وزیراعظم عمران خان امریکہ کے کامیاب دورے کے بعد

سعودی ائیرلائن کی پرواز کے ذریعے اسلام آباد ائیرپورٹ پہنچے، وزیر

خارجہ شاہ محمود قریشی بھی ان کے ہمراہ تھے۔ اسلام آباد آمد پر وزیراعظم

عمران خان کا شاندار استقبال کیا گیا، وفاقی وزراء، پارٹی رہنماؤں و کارکنوں

کی بڑی تعداد نے انہیں پھولوں کے ہار پہنائے، نعرے لگائے۔ اس موقع پر

سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے جبکہ اہم شاہراہوں پر استقبالیہ

بینرز بھی آویزاں کیے گئے۔

میں کشمیریوں کا سفیر، مودی سرکار کو
بے نقاب کروںگا

وزیراعظم عمران خان نے اسلام آباد ائیرپورٹ پہنچنے کے بعد استقبال کیلئے

آنیوالے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا میں قوم سے وعدہ کرتا ہوں بھارت

کی فاشسٹ اور مسلمانوں سے نفرت کرنیوالی مودی سرکار کو دنیا کے ہر فورم

پر بے نقاب کروں گا، قوم کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جس طرح انہوں نے دعائیں

کیں تاکہ ہم اپنے کشمیری بھائیوں کا کیس مشکل وقت میں اقوام متحدہ میں لڑ

سکیں۔ خاص طور پر بشریٰ بی بی کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جنہوں نے میرے

لیے بہت دعائیں کیں۔ پاکستان اور کشمیر کے عوام کو مایوس نہیں ہونا، انہیں

برے وقت میں گھبرانا نہیں کیونکہ کشمیری آپ کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ یہ

ایک جہاد ہے اور ہم کشمیریوں کیساتھ اس لیے کھڑے ہیں کہ ہم اللہ کو خوش

کرنا چاہتے ہیں۔ دنیا کشمیریوں کیساتھ کھڑی ہو نا ہو لیکن پاکستان کشمیریوں

کیساتھ کھڑا ہے اور میں کشمیریوں کا سفیر ہوں، بھارتی فوج نے 80 لاکھ

کشمیریوں کو کرفیو میں بند کر رکھا ہے، جدوجہد میں اونچ نیچ ہوتی ہے، اچھا

وقت بھی آتا ہے اور برا بھی لیکن برے وقت میں مایوس نہیں ہونا کیونکہ

کشمیری مائیں، بہنیں اور بزرگ ہماری طرف دیکھ رہے ہیں، کشمیری اپنی

جدوجہد جیتیں گے اور کامیاب ہوں گے۔ جو لوگ میرے ساتھ گزشتہ 20 سالوں

سے موجود ہیں ان سب کو ایک چیز سمجھائی ہے کوشش انسان کی ہوتی ہے،

کامیابی اللہ تعالیٰ دیتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کسی بھی جارحیت کا منہ توڑجواب دینے کیلئے تیارہیں، عمران خان

امریکی روزنامہ میں شائع کئے گئے اپنے ایک مضمون میں وزیر اعظم عمران

خان نے عزم ظاہر کیا کہ پاکستانی قوم کشمیریوں کے حق خودارادیت کے

حصول تک چین سے نہیں بیٹھے گی، خواہ اس کیلئے کوئی بھی قیمت ادا کرنی

پڑے۔ وقت کے تقاضوں کے مطابق دنیا کو یہ فیصلہ کرنا ہوگا کہ کب تک

سیاسی اور اقتصادی مفادات انسانی و اخلاقی اقدار پر غلبہ برقرار رکھیں گے۔

عمران خان نے وقار اور احترام کیساتھ قیام امن کے بارے میں پاکستان کی

خواہش کا اعادہ کیا اور مزید لکھا کہ پانچ اگست کے بھارتی اقدامات اور

مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کے نفاذ کے بعد بین الاقوامی ذرائع ابلاغ، انسانی

حقوق کی تنظیموں اور متعدد عالمی رہنمائوں نے اسی لاکھ کشمیریوں کی حالت

زار، بھارت اور پاکستان کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی پر تشویش کا اظہار

کیا ہے،تاہم بعض ملکوں نے اپنے کاروباری اور تجارتی مفادات کو انسانی

حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں سے پیدا ہونیوالے عالمی انسانی المیے پر

ترجیح دی۔ مودی کو خوش کرنے کی پالیسی اسی پالیسی کا اعادہ ہے جو

دوسری جنگ عظیم کا باعث بنی ایسی صورتحال میں عالمی برادری کیلئے ایک

بہت بڑا سوالیہ نشان ہے کہ کیا دنیا اسی طرح کے المناک سانحے کیلئے تیار

ہے خصوصا ایسے حالات میں جب پاکستان اور بھارت دونوں ممالک ایٹمی

طاقتیں ہیں؟

مقبوضہ کشمیر کی مخدوش صورتحال کا خمیازہ
پوری دنیا کو بھگتنا ہوگا

بھارت کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو پاکستان کی زیر سرپرستی دہشتگردی

قرار دیتے ہوئے پاکستان کو بدنام کرنے کی مذموم کوششیں کررہا ہے۔عمران

خان نے عالمی برادری کو خبردار کیا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں جیسے ہی

کرفیو کی پابندی میں نرمی کریگا توہ وہ بوکھلاہٹ میں ایک بار پھر علاقائی

امن کو نقصان پہنچانے کی کوشش کریگا۔ وزیر اعظم عمران خان کا اپنے

مضمون میں مزید کہنا تھا بھارت تنازعہ کشمیر کو دوطرفہ معاملہ قرار دیکر

موجودہ کشیدہ صورتحال پر پردہ ڈال رہا ہے جبکہ دوسری طرف وہ دوطرفہ

مذاکرات سے انکاری ہے۔ مقبوضہ کشمیر کی مخدوش صورتحال کا خمیازہ نہ

صرف دونوں ملکوں، کشمیری عوام بلکہ پوری دنیا کو بھگتنا ہوگا۔