157

دریائے ستلج میں پانی کی سطح 20 فٹ ہوگئی ،ریلہ آج کوٹ مٹھن سے گزریگا

Spread the love

قصور،راجن پور (مانیٹرنگ ڈیسک ) بھارت کی آبی جارحیت جاری ہے، قصور

میں دریائے ستلج میں پانی کی سطح 20 فٹ تک پہنچ گئی، پانی ڈیڈ لیول سے

صرف دو فٹ کی دوری پر رہ گیا، گنڈا سنگھ کے مقام پر بہاؤ 70 ہزار کیوسک

ہے۔پانی کے بہاؤ میں مسلسل اضافے کے باعث قریبی بستیاں زیر آب آگئیں جس

سے فصلوں کو نقصان پہنچا، مویشی بھی ہلاک ہوئے۔ خراب صورتحال کے پیش

نظر لوگ اپنا گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہیں۔ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں میں

امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔ دریائے راوی میں سیلابی صورتحال ہے، پانی کے

تیز بہاؤ کی وجہ سے سید والہ راوی پل ٹریفک کیلئے بند کر دیا گیا۔ بہاولنگر کے

قریب ہیڈ سلیمانکی کے مقام پر پانی کے بہاؤ میں اضافہ ہو رہا ہے۔ جہاں پانی کی

آمد 30 ہزار 993، اخراج 18880 کیوسک ریکارڈ کی گئی۔ضلعی انتظامیہ نے

علاقے میں 15 فلڈ ریلیف کیمپ قائم کر دیئے۔ راجن پور میں دریائے سندھ میں

پانی کی سطح بلند ہونے سے کوٹ مٹھن میں کئی دیہات ڈوب گئے، فصلیں بھی تباہ

ہوگئیں۔ دادو میں سیلابی ریلا تحصیل میہڑ میں داخل ہوگیا جس سے پورا گاؤں تباہ

ہوگیا، لوگوں کے مکان گر گئے، 5 ہزار خاندان بے گھر ہوگئے۔صوبائی وزیر

پاپولیشن ویلفیئر ہاشم ڈوگر نے قصور میں سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ کیا۔ صوبائی

وزیر نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں متاثرین کے لئیے کئیے جانے والے

انتظامات کا جائزہ لیا۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ حکومت نے حفاظتی انتظامات اور

ریسکیو کیلئے موبائل ہیلتھ یونٹس اور تمام ضروری آلات و سامان مہیا کررکھا

ہے۔ ہاشم ڈوگر نے کہا کہ سیلاب زدہ علاقوں سے متاثرین کو منتقل کیے جانے

والے محفوظ مقامات پر مناسب کیمپس اور ٹرانسپورٹ کا مکمل انتظام موجود ہے۔

تمام تیاری کے ساتھ ساتھ ہم دعاگو بھی ہیں کہ ملک و قوم اس قدرتی آفت سے

محفوظ رہے۔