Agent 909 episod 12 jtnonline 95

برٹش بورن ’’رجو‘‘ کی کہانی 909 کی زبانی

Spread the love

برٹش بورن ’’رجو‘‘

909 نارتھ چیم لندن روڈ پر واقع میک ڈونلڈ ریستوران میں بریک فاسٹ میں

مصروف تھا کہ اچانک اس کی نظر کار پارکنگ میں کام کرتی ’’رجو‘‘ پر پڑی،

وہ بڑے انہماک کیساتھ لٹرنگ میں مصروف تھی، 909 اس کیساتھ اسی ریستوران

میں کام کر چکا تھا، اس نے پھرتی کیساتھ بریک فاسٹ ختم کیا اور سٹرابری شیک

کا گلاس اٹھائے باہر چلا گیا، اس نے ’’رجو‘‘ کے قریب جا کر اسے پیچھے سے

آواز دی’’ہائے روز،ہائو آر یو‘‘ وہ یکدم پیچھے کو مڑی اور 909 کو دیکھتے ہی

خوشی سے اچھل پڑی، اس نے انتہائی گرم جوشی سے اس سے ہاتھ ملایا اور حال

احوال جاننا شروع کر دیا، 909 نے اسے بتایا کہ وہ ان دنوں کسی Takeaway پر

کام کررہا ہے، اس نے 909 کی جانب سے رابطہ نہ رکھنے پر سخت ناراضی اور

فون نمبر بدلنے پر دکھ کا اظہار کیا، اس نے 909 سے ماضی کے خوش گوار

یہ بھی پڑھیں: نن، سلیب، برہنہ مجسمہ، مندر، اسلامک سینٹر اور 909

لمحات کا ذکر چھیڑ دیا اور اسی دوران ریستوران کا نیا منیجر بہانے سے کار

پارکنگ میں آ گیا، ایسی ملازمتوں میں یہ روٹین کی بات تھی کہ چیک کیا جائے

ایک ورکر کام کے دوران گاہک سے کیوں بے تکلف ہو رہا ہے، روز نے منیجر

کو 909 کا تعارف کروایا تو منیجر نے روکھے پن سے ہیلو ہائے کہا اور’’رجو‘‘

کو اندر آنے کا کہہ کر واپس چلا گیا، 909 جانتا تھا کہ ’’رجو‘‘ کو آخر کار کیا

چاہئے،اس نے فوراً اس سے کہا کہ آج رات سامنے والے PUB میں آئے جائے

اس کا کام ہو جائیگا ،’’رجو‘‘ اس آفر پر انتہائی خوش ہوئی اور نہ بھولنے کا کہہ

کر ریستوران کے اندر چلی گئی۔

Restaurant

909 نے گاڑی اسٹارٹ کی اور وہاں سے چل پڑا، اسے اس میکڈونلڈ میں بیتا زمانہ

یاد آنے لگا،’’رجو‘‘ کا اصل نام رضیہ تھا اور اسے پیار سے Rose کہہ کر پکارا

جاتا تھا، اس کے شناختی بیج پر بھی رضیہ کی بجائے روز درج تھا، وہ برٹش

بورن لڑکی تھی، برطانیہ ہی میں پلی بڑھی تھی، یہی اس کا وطن تھا، کالی اور

گوریاں اس کی سہیلیاں تھیں، وہ بمشکل اردو بول سکتی تھی البتہ پنجابی زبان میں

بات کرنے اور لڑنے پر فخر محسوس کرتی تھی، اس کا والد انتہائی سخت گیر

انسان تھا، اس کی دو بیٹیاں اور ایک بیٹا تھا، تمام لندن ہی میں پیدا ہوئے تھے، لڑکا

باپ کا فرمانبردار تھا اور اس کے کام کاج میں ہاتھ بٹاتا تھا، اس سے چھوٹی رضیہ

انتہائی شرارتی مگر پڑھی لکھی تھی، رضیہ کی عمر23 برس تھی، اس نے

Kingston کالج میں تعلیم حاصل کی تھی جہاں اسکو نشے کی لت لگ گئی تھی-

Kingston College London

سگریٹ تو اس نے سکول ہی میں پینا شروع کر دئے تھے البتہ ’’سپلف‘‘ کالج میں

پینا شروع کیا تھا، اسکا پہلا بوائے فرینڈ ایک افریقی نژاد طالبعلم تھا اور Brixton

میں رہائش پذیر تھا، وہ کالج کے طلبہ میں چرس فروخت کرتا تھا، رضیہ کو بھی

اسی نے چرس کی لت لگائی تھی اور متعدد دفعہ اپنی ہوس کا نشانہ بھی بنایا تھا،

رضیہ اس سے قبل کنواری تھی لیکن اس کالے نے اس کی عزت سے کھیل کر

اسے اندھی گھوڑی بنا دیا تھا، رضیہ کے والد کو بھی اس کے لچھن کا پتہ چل چکا

تھا اور یہ شکایت اس کے بڑے بھائی نے ہی لگائی تھی، یہ وہ بپتا تھی جو رضیہ

کبھی کبھار 909 کو سناتی رہتی تھی۔ ان دنوں وہ خاصی دکھی تھی اس وقت 909

نے اسے بھاشن دے دے کر زندگی کو ایک نئے انداز سے دیکھنا سکھایا تھا،

رضیہ اسکی بہت مشکور تھی، وہ اپنا ہر دکھ،سکھ 909 سے شیئر کرتی تھی-

Rose & Agent 909 Car

ایک بار میکڈونلڈ میں نائٹ ڈیوٹی کے بعد دونوں تھکے ہارے باہر نکلے، رضیہ کا

گھر قریب ہی تھا اور وہ پیدل ہی آتی جاتی تھی، ہفتے کی رات تھی، رضیہ اپنی

سہیلیوں کا انتظار کر رہی تھی، اسکی سہیلیاں اپنے بوائے فرینڈز کیساتھ سنٹرل

لندن ویک اینڈ منانے گئی ہوئی تھیں، واپسی پر وہ رضیہ کیلئے بیئر اور چرس

لانے والی تھیں، رضیہ شدت سے انکا انتظار کر رہی تھی، اسکی ایک سہیلی نے

فون پر بتایا کہ وہ رات 3 بجے تک پہنچ جائیں گی، ابھی صرف ڈیڑھ بجا تھا، 909

نے رضیہ کو گاڑی میں بیٹھنے کی آفر کی جو اس نے فوراً قبول کرلی، 909 نے

گاڑی کی اندرونی لائٹس آن کرکے ’’پکا‘‘ سگریٹ تیار کیا اور سلگا لیا، دو چار

کش کھینچنے کے بعد اس نے’’سپلف‘‘ رضیہ کی جانب بڑھایا تو اس نے انتہائی

بے صبری سے وہ پکڑا اور اپنے لبوں سے لگا کر بڑے بڑے کش کھینچنا شروع

کر دئے، دو لمبے کش کھینچ کر اس نے ’’سپلف‘‘ دوبارہ 909 کو پکڑا دیا، یہی

مزید پڑھیں: “جو” کی قسمت کا حال، 909 کی نصیحت

سے دونوں میں انمٹ دوستی کا آغاز ہوا، رضیہ نے اپنی سکول اور کلاج لائف

کے بارے میں 909 کو بتانا شروع کر دیا، 909 نے ایک اور ’’ سپلف ‘‘ تیار کیا

اور سلگانے ہی لگا تھا، رضیہ نے اسے ٹوک دیا اور التجا کی کہ وہ یہ ’’سپلف‘‘

اسے دیدے، اس نے رضیہ کو اس سے بھی بہترین ’’سپلف‘‘ بنا کر دینے کا وعدہ

کیا اور دونوں نے پھر مل کر کش لگانے شروع کر دئے،اب رضیہ مست ہو چکی

تھی، اسکی خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہ تھا، اسکی ساری تھکن اتر چکی تھی اور

جوانی انگڑائی لے رہی تھی-

909 giving Spliff to RajoRajo enjoying Spliff with 909

اس نے بتایا کس طرح اس کا ظالم باپ اسکی ماں کو ہر روز مارتا تھا، اس نے

شرٹ اتار کر اپنی پیٹھ پر پڑے بیلٹ کے نشانات بھی دکھائے جو اس کے بھائی

نے ڈالے تھے اور وہ بھی اپنے باپ کے کہنے پر، رضیہ نے بتایا کہ اس نے

شروع شروع میں ایک دو بار ماں پر تشدد کیخلاف پولیس کو بھی کال کی تھی،

پڑھیں: رائی گیٹ ایونیو، سکنک اورمائیکل کی گرل فرینڈ شیلے

پولیس فوراً پہنچ گئی لیکن اس کی فرمانبردار ماں نے خود پر کسی بھی قسم کے

تشدد ہونے سے صاف انکار کر دیا اور الٹا الزام اپنی بیٹی پر لگا دیا کہ وہ باپ

سے سگریٹ پینے کیلئے پیسے مانگتی تھی اور انکار پر پولیس بلانے کی

دھمکیاں دیتی تھی، رضیہ کے نزدیک یہ اس کی ماں کا ایک نیا روپ تھا جو اس

نے اس سے پہلے کبھی نہ دیکھا تھا، حالانکہ وہ اپنی بیٹی سے حد درجہ پیار کرتی

تھی، رضیہ نے بتایا کہ پھر آہستہ آہستہ اس کو سمجھ آنا شروع ہو گئی کہ اس کی

ماں پاکستان میں اپنے سسرال اور میکے والوں کی آنکھوں میں سرخرو ہو کر مرنا

چاہتی تھی، وہ اپنے شوہر کی حد درجہ تابعدار تھی، اسکا باپ بیٹی کی نافرمانی

کی سزا اپنی بیوی کو دیتا تھا اور اسے مارتا پیٹتا تھا، رضیہ کش لگاتے بتاتی گئی

اسکی ماں نے اسے دوست بنا لیا اور روزانہ اس کے تکیے کے نیچے 2 سگریٹ

بھی رکھ دیتی تھی، رسی نما سیڑھی بھی بیڈ کے نیچے موجود تھی، جو رضیہ کی

چھوٹی بہن نیچے پھینکتی تھی اور اس کے بدلے وہ بھی سگریٹ شیئر کرتی تھی-

Rajo Climbing Rope at her home

رضیہ نے بتایا کہ آج رات بھی ٹھیک 3 بجے اسکی چھوٹی بہن گھر کی بیل بجائے

گی جس سے اسکے والد کو پتہ چل جائے گا کہ ’’رجو‘‘ لوٹ آئی ہے، دروازہ ہر

صورت اس کی ماں ہی کھولتی تھی، یوں ہفتے میں ایک دن اسے آزادی کیساتھ

جینے کا حق ملتا تھا، 909 نے اسکے بھائی کے متعلق پوچھا تو رضیہ نے بتایا

وہ ہر جمعہ کی رات مدرسے چلا جاتا تھا اور اتوار کی صبح واپس آتا تھا، باتوں

باتوں میں 909 نے اس کی شادی سے متعلق استفسار کیا تواس نے بتایا اس کے

والدین اسے تین برس قبل جب وہ 20 برس کی تھی مظفر آباد لے گئے، جہاں اسکی

چچا کے بیٹے سے اسکا نکاح کر دیا گیا تھا، شادی سے قبل اسکی ماں نے اسکی

برین واشنگ کی تھی اور کہا تھا کہ اگر اس نے باپ کا کہنا نہ مانا تو وہ خود کشی

کر لے گا اور اگر اسے کچھ ہوا تو وہ بھی اپنی جان دیدے گی، البتہ اسکی ماں نے

کانوں کان یہ بھی کہہ دیا کہ وقت آنے پر اسے چھوڑ دینا اگر پسند آ جائے تو رکھ

لینا۔ رضیہ باتوں باتوں میں سارا ’’سپلف‘‘ پی گئی، 909 کے پاس گاڑی میں تیار

شدہ ’’سپلف ‘‘ پہلے سے موجود تھا اس نے ڈیش بورڈ میں سے اسے نکالا اور

سلگا لیا جس پر رضیہ کی ایک مرتبہ پھر باچھیں کھل گئیں، 909 نے دو چار

لمبے کش کھینچے اور ’’سپلف‘‘ رضیہ کو پکڑا دیا، اس نے پھر کش لگانے

شروع کر دئے، اسی دوران 909 نے بیگ میں سے اورنج جوس نکال کر رضیہ

کو تھمایا اور کہا اسے پی لے اور پھر کش لگائے، اس کا منہ خشک ہو چکا تھا

اس نے فوراً پلپی جوس کا ڈھکن کھولا اور آدھی بوتل خالی کرکے واپس کر دی،

Agent 909 Spiffing with Rajo Rajo Drinking Pulpy Juce with Agent 909

909 نے بوتل خالی کرکے ونڈ سکرین نیچے کی تو ہوا کا زور دار جھونکا اندر

داخل ہوا، رضیہ نے ونڈو کھلی رہنے کی فرمائش کی اور کش لگانے شروع کر

دئے، وہ ایک مرتبہ پھر شروع ہو گئی کہ کس طرح شادی سے قبل اسکی اس کے

دیسی اجڈ شوہر کیساتھ تفصیلی بات چیت ہوئی، رضیہ نے بتایا اس نے اپنے شوہر

کو صاف صاف بتا دیا کہ وہ اس کے کنوارے پن پر کوئی سوال نہیں کرے گا، اس

نے حامی بھری کہ ایسا کبھی نہیں ہو گا، پھر اس نے اسے اپنے سگریٹ پینے کے

بارے میں بھی بتایا تو اس نے بالکل برا نہ منایا اور یوں آپس کی انڈر سٹینڈنگ کے

بعد دونوں نے شادی کرنے کی حامی بھر لی، چند دنوں میں رضیہ کی شادی ہو

گئی۔ رضیہ تھوڑی دیر کیلئے خاموش ہو گئی، اڑھائی بج چکے تھے، کار پارکنگ

میں ان دونوں کے علاوہ اور کوئی نہ تھا، تمام ورکر گھروں کو لوٹ چکے تھے،

MacDonald Car Parking

رضیہ نے ایک لمبے توقف کے بعد بتایا کہ اس کا شوہر رات کو چرس پی کر آتا

تھا اور اس کیساتھ طویل وقتی ہم بستری کرتا تھا، رضیہ نے ایک رات اس پر

اعتراض کیا اور “قرآن پاک” اٹھا لائی اور شوہر کو اسکی قسم دیتے ہوئے اسکے

نشے کے بارے استفسار کیا، وہ گھبرا گیا تھا اور اس نے اقرار کر لیا تھا کہ وہ

چرس کا شیدائی تھا، رضیہ نے کہا اگر وہ میاں بیوی کا رشتہ رکھنا چاہتا ہے تو

اسے کمپرومائز کرنا پڑے گا، اس کا شوہر پریشان ہو گیا کہ وہ کیسا کمپرومائز

چاہتی ہے، رضیہ نے فرمائش کر ڈالی کہ وہ اسے بھی سگریٹ بنا کر پلائے، وہ

کچھ دیر تو سوچتا رہا پھر راضی ہو گیا، رضیہ نے بتایا اس رات ہم دونوں میاں

بیوی نے مل کر چرس پی اور خوب سوئے، اب ان دونوں میں دوستی ہو گئی تھی،

Rajo with husband in bedroomRajo with Husband in a park

وہ راتوں کو مختلف تفریحی مقامات پر لمحات گزارتے اور مل کر پیتے تھے، اسی

دوران چھٹیاں ختم ہو گئیں، رضیہ نے بتایا اس نے برطانیہ جانے سے قبل قرآن

پاک پر ہاتھ رکھ کر اپنے شوہر کو قسم دی تھی کہ کسی غیر مرد کیساتھ جسمانی

Rose with Husband in carRajo with husband looking sunsetrajo enjoy rain with her husband

تعلقات قائم نہیں کریگی اور وہ اس قسم پر مکمل عمل پیرا تھی، پھر اس کے شوہر

نے برطانیہ آنے کیلئے ویزا اپلائی کیا تو وہ ریجیکٹ ہو گیا کیونکہ رضیہ کام کاج

نہ کر تی تھی اور اس کا ٹیکس جمع نہ ہوتا تھا وہ اپنے باپ کے خرچے پر پل بڑھ

رہی تھی، اس کو اپنے شوہر کی خاطر فل ٹائم کام کرنا پڑ رہا تھا، اسی دوران اس

کی سہیلیاں کار پارکنگ میں شور مچاتے داخل ہوئیں، 909 نے فوراً سکنک کا

ایک دانہ رضیہ کے ہاتھ میں تھمایا اور وہ 909 سے بے اختیا ر ’’ کس‘‘ کرکے

گاڑی سے نیچے اتر گئی، گاڑی سے نیچے اترتے ہوئے اس نے کہا میں نے

جسمانی سیکس نہ کرنے کی قسم کھائی تھی اس کیلئے نہیں،

یہ بھی پڑھیں: بوسہ اور 50 پائونڈ…

دونوں ہنسنا شروع ہو گئے اور رضیہ اگلے روز ملنے کا کہہ کر سہیلیوں کے پاس

چلی گئی، وہ جاتے ہوئے انتہائی خوش دکھائی دے رہی تھی ایسے اس کو کوئی

بہت بڑا ذہنی بوجھ اتر گیا ہو ۔۔۔۔ جاری ۔۔۔۔۔

Agent 909 Dr,I.S introduction