95

موجودہ صورتحال میں روپے کی قدر کو نہیں سنبھال سکتے،حفیظ شیخ

Spread the love

کراچی(کامر س رپورٹر ) مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے کہا ہے کہ کمزورمعیشت

ورثے میں ملی، موجودہ صورتحال میں روپے کی قدر کو سنبھالا نہیں جاسکتا،

ملک97 ارب ڈالر کا مقروض ہے، ماضی میں ترقی کیلئے پالیسیاں نہیں بنائی

گئیں، ہم نے کبھی مسلسل معاشی ترقی حاصل نہیں کی، ہم بیرونی دنیا کے ساتھ

کاروبار کرنا پسند نہیں کرتے، ہمارے کاروباری طبقے نے ملک سے باہر اچھے

تعلقات نہیں بنائے، دس سالوں میں برآمدات میں کوئی اضافہ نہیں ہوا، چین مسلسل

40 سال سے ترقی کر رہا ہے، پاکستان معاشی ترقی طویل مدت نہیں رہی، ہم نے

70 سال میں اپنی مصنوعات دنیا کو فروخت نہیں کی،آئندہ مالی سال سود 3 ہزار

ارب روپے ہوگا، ایک سال میں مالیاتی خسارہ 3 ٹریلین ہوگا۔تفصیلات کے مطابق

کراچی میں کونسل آف فارن ریلیشنزکے تحت تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مشیر

خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ بہترمعاشی پالیسیاں ہی مضبوط معیشت کی

ضمانت ہیں۔انہوں نے کہا کہ ماضی میں دیرپا اقتصادی ترقی کے لیے پالسیاں نہیں

بنائی گئیں، گزشتہ حکومت نے تجارت اوربرآمدات پرتوجہ نہیں دی۔عبدالحفیظ شیخ

نے کہا کہ پالیسی کا تسلسل نہ ہونے کی وجہ سے معیشت کونقصان پہنچا، پاکستان

میں ہم نے معاشی ترقی کا تسلسل نہیں دیکھا۔مشیرخزانہ نے کہا کہ دوسروں

کواپنی مصنوعات بیچنے میں ناکام ہیں اورکوئی آنا نہیں چاہتا، پاکستانی منصوعات

کے لیے بیرونی منڈیاں تلاش نہیں کی گئیں۔انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت

کوکمزورمعیشت ورثے میں ملی، تجارت پرعدم توجہ کے باعث معیشت زبوں

حالی کا شکارہوئی۔عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ پاکستان کا مجموعی قرضہ 13

ہزارارب روپے ہے، غیرملکی قرضہ97 ارب ڈالر ہے، اس سال حکومت نے 2

ہزارارب روپیسود دیا ہے جبکہ آئندہ مالی سال سود3 ہزارارب روپے دینا ہوگا۔

مشیر خزانہ نے کہا کہ ایک سال میں مالیاتی خسارہ 3 ٹریلین ڈالرہوگا، گزشتہ 5

سال میں ایکسپورٹ میں صفرفیصد کی شرح سے اضافہ ہوا، تجارتی خسارہ 40

ارب ڈالرہے، ہم سب کچھ درآمد کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس صورت حال میں

روپے کی قدرکوسنبھالا نہیں جاسکتا، پاکستان معاشی بحران کا شکارہوچکا ہے۔

عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ میں خطرات کا مقابلہ کرنے کے لیے اقدامات کرنا تھے،

فوری بحران کوحل کرنے لیے دوست ملکوں سے مدد مانگی، سعودی عرب

اوردیگرسے تیل کی تاخیرادائیگی کا بندوبست کیا۔