99

پابندی نظرانداز،ٹرمپ کا سعودی عرب کو ہتھیار فروخت کرنے کا اعلان

Spread the love

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کانگریس کی طرف سے

لگائی جانیوالی پابندی کو نظر انداز کرکے سعودی عرب، یو اے ای اور اردن کو

آٹھ ارب ڈالر مالیت کے ہتھیار فروخت کرنے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے اس مقصد

کیلئے اپنے خصوصی انتظا می اختیارات استعمال کرتے ہوئے ایران کے مشرقی

وسطیٰ میں بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ کا جواز پیش کرکے ہنگامی حالت نافذ کی

ہے اور اس کا جواز کسی حد تک درست ہے، یہ بعد کی بات ہے۔وزیر خارجہ

مائیک پومپیو نے جمعہ کے روز کانگریس کو وائٹ ہائوس کے اس فیصلے سے

رسمی طور پر آگاہ کر دیا تھا۔ اس دوران صدر ٹرمپ نے بھی واضح کر دیا ہے کہ

ایران کے خطرے کے پیش نظر خطے میں دفاعی اقدامات ضروری ہیں، جن میں

امریکہ اپنے اتحادیوں کی مدد کر رہا ہے۔ امریکی وزیر خارجہ نے اپنے بیان میں

کہا ہے آٹھ ارب دس کروڑ ڈالر مالیت کے فوجی ساز و سامان کی فروخت کے اس

معاہدے کے ذریعے ہم مشرق وسطیٰ میں اپنے اتحادیوں کو امداد فراہم کر رہے

ہیں۔ اسی طرح انہیں اپنا دفاع کرنے اور اس خطرے کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت

میں اضافہ کرنے کا موقع ملے گا۔ وزیر خارجہ پومپیو نے کانگریس کے نام ایک

خط میں ٹرمپ انتظامیہ کے فیصلے وضاحت کی ہے اور انہیں بتایا ہے کہ اس

وقت ہنگامی حالت نافذ ہے، جس کے تحت ایران کے خطرے کے پیش نظر مشرق

وسطی میں مزید پندرہ سو امریکی فوجی بھیجے جا رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply