169

سپریم کورٹ کا عافیہ صدیقی کیس اوورسیز پاکستانیوں کے مقدمہ کےساتھ منسلک کرنے کا حکم

Spread the love

اسلام آباد(جے ٹی این آن لائن سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک)

سپریم کورٹ میں ڈاکٹرعافیہ صدیقی کی وطن واپسی کیس کی سماعت ہوئی۔دوران

سماعت ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا عافیہ صدیقی کی ہر3 ماہ بعد قونصلر

سے ملاقات ہوتی ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے استفسار کیا جائزہ لیں عافیہ صدیقی

کی سزا پاکستان میں پوری ہو سکتی ہے؟۔ عافیہ کا معاملہ دیگر پاکستانیوں کے

ساتھ اٹھانے سے شاید کچھ ہو جائے۔ بعدازں عدالت عظمی نے کیس کو بیرون ملک

قید پاکستانیوں کے کیس سے منسلک کرنے کا حکم دیتے ہوئے مزید سماعت غیر

معینہ مدت تک ملتوی کر دی۔

،

خیال رہے گزشتہ ہفتے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بتایا امریکی جیل میں

دہشت گردی کے الزام میں سزا بھگتنے والی پاکستانی نژاد ڈاکٹر عافیہ صدیقی نے

اپنی سزا کے خلاف اپیل دائر کرنے کے لیے آمادگی ظاہر کی ہے،اس ضمن میں ۔

سینیٹ کے اجلاس میں وزیر خارجہ کی جانب سے ڈاکٹر عافیہ کے معاملے پر

تحریری جواب جمع کرایا گیا جس میں بتایا گیا کہ حکومت پاکستان امریکی حکام

کے ساتھ عافیہ صدیقی کے معاملے میں مسلسل رابطے میں ہیں اور ان کی واپسی

کا معاملہ اٹھائے ہوئے ہے۔ چند روز قبل یہ اطلاعات سامنے آئی تھیں کہ ترجمان

دفترِ خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے برطانوی نشریاتی ادارے کو انٹرویو دیتے ہوئے

کہا امریکی جیل میں قید ڈاکٹر عافیہ صدیقی پاکستان نہیں آنا چاہتیں۔ وزیراعظم

عمران خان کی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ ملاقات میں ڈاکٹر عافیہ اور

ڈاکٹرشکیل آفریدی کے حوالے سے بات ہو سکتی ہے۔

جعلی ڈگری کیس، 8 پی آئی اے ملازمین کی نظرثانی درخواستیں خارج

سپریم کورٹ نے پی آئی اے کے 8 ملازمین کی نظرثانی ومتفرق درخواستیں خارج

کر دیں، جسٹس عظمت سعید نے پی آئی اے کے وکیل عمر لاکھانی پر برہمی کا

اظہار کرتے ہوئے کہا تقریر کا شوق ہے تو کہیں اور جا کر کریں، آپ کو کیس کا

پتہ نہیں ہوتا اور آ جاتے ہیں، جا کر دوبارہ لا کالج میں داخلہ لیں۔ گزشتہ روز پی

آئی اے پائلٹس کی جعلی ڈگری کے کیس کی سماعت جسٹس عظمت سعید کی

سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے کی۔ دوران سماعت جسٹس عظمت سعید نے

ریمارکس دئیے عدالت اپنے فیصلے پر کیا نظر ثانی کرے، کیوں نہ نظر ثانی کر

کے جعلی ڈگری والوں کے خلاف پرچہ درج کرنے کا حکم دیں، سپریم کورٹ کا

مذاق بنایا ہوا ہے، عدالت کا ادب و احترام رہا ہی نہیں۔ درخواست گزار کے وکیل

نے عدالت میں استدعا کی کہ عدالت نے جو حکم دیا اس کی غلط تشریح کی جا

رہی ہے، متعلقہ عدالتیں سپریم کورٹ کے فیصلے کی وجہ سے ہماری بات سننے

کو تیار نہیں۔عدالت نے حکم دیا متعلقہ عدالتیں قانون کے مطابق پی آئے اے کے

ملازمین کی درخواستوں پر فیصلہ کریں۔ سپریم کورٹ میں شازیہ آفریدی، ثمینہ

قریشی، عبد الروف بیگ، نذر خان،کامران خان، طاہرہ سلطانہ، ثنا گل اور شکیب

شوکت نے درخواستیں دائر کی تھیں۔

پرویز مشرف کی کاغذات نامزدگی سے متعلق 2 اپیلیں، الیکشن کمیشن

کے خلاف درخواست سماعت کیلئے مقرر

سپریم کورٹ نے سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کی کاغذات نامزدگی سے

متعلق 2 اپیلیں جبکہ الیکشن کمیشن کے خلاف درخواست 27 مئی کو سماعت

کیلئے مقرر کر دی، پرویز مشرف کے کاغذات نامزدگی کیس میں وفاقی وزیر

قانون فروغ نسیم وکیل ہیں جواب پبلک سیٹ ہولڈر ہونے کے سبب بطور وکیل

عدالت میں پیش نہیں ہو سکتے، آئندہ سماعت پرویز مشرف کی طرف سے کسی

اور وکیل مقرر کرنے کی درخواست کی جائیگی، پرویز مشرف کے 2013 کے

عام انتخابات میں کاغذات نامزدگی مسترد کئے گئے تھے۔

افضال اخلاق المعروف ڈبل شاہ کی درخواست ضمانت مسترد

سپریم کورٹ نے افضال اخلاق المعروف ڈبل شاہ کی درخواست ضمانت مسترد

کردی، جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے عوام کو لوٹنے والے کسی رعایت

کے مستحق نہیں۔ درخواست ضمانت کی سماعت جسٹس عظمت سعید کی سربراہی

میں بنچ نے کی، وکیل ملزم افضال اخلاق نے کہا میرا موکل 4 سال سے جیل میں

ہے۔ ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل نیب نیئر رضوی نے کہا ڈبل شاہ کیخلاف 2016

میں ریفرنس دائر کیا گیا، ڈبل شاہ کے متاثرین کی تعداد 3540 ہے، ملزم کی

ضمانت کی 3 درخواستیں پہلے بھی مسترد ہو چکی ہیں۔ملزم نے عوام کو ساڑھے

12 ارب روپے سے زائد کا نقصان پہنچایا،اس کے 2 ساتھی تاحال مفرور ہیں۔