Unided Kingdom Elections-2019 52

برطانوی انتخابات میں حکومتی جماعت کو حکومت بنانے کیلیے سادہ اکثریت حاصل

Spread the love

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک)برطانیہ میں پولنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی جاری ہے،

حکومتی جماعت کنزرویٹو پارٹی 337 نشستوں پر کامیاب، لیبر پارٹی 198 نشستوں کے ساتھ دوسرے

نمبر پر جبکہ سکاٹش نیشنل پارٹی 45 کے ساتھ تیسرے نمبر پر ہے ۔ساجد جاوید اور ناز شاہ سمیت

15 پاکستانی کامیاب ہوگئے۔ دوسری جانب لیبر پارٹی کے سربراہ جیرمی کوربن نے پارٹی قیادت

چھوڑنے کا اعلان کر دیا ۔ کل 650 نشستوں میں سے 610 کے نتائج کا اعلان کیا گیا ہے ، وزیراعظم

بورس جانسن نے اپنی نشست جیت لی۔ زیک گولڈ سمتھ کو 7 ہزار 700 ووٹوں سے شکست ہوئی۔

سابق وزیراعظم تھریسامے بھی جیت گئیں۔عام انتخابات میں انگلینڈ، ویلز، سکاٹ لینڈ اور شمالی آئر

لینڈ سے 650 نشستوں کیلئے 3 ہزار 322 امیدواروں نے قسمت آزمائی کی، کنزرویٹو پارٹی کے

سربراہ اور موجودہ وزیر اعظم بورس جانسن نے اپنے حلقے سے باہر ووٹ کاسٹ کیا، لیبر پارٹی

کے سربراہ جیریمی کوربن نے شمالی لندن میں اہلیہ کے ہمراہ ووٹ کاسٹ کیا۔سکاٹ لینڈ کی سب

سے بڑی جماعت سکاٹش پارٹی کی سربراہ نکولا اسٹرجن نے گلاسگو میں اپنا حق رائے دہی استعمال

کیا۔ لبرل ڈٰیموکریٹس کی سربراہ جو سوئنسن اپنے شوہر کے ساتھ پولنگ سٹیشن پہنچیں اور ووٹ

کاسٹ کیا۔برطانیہ کے عام انتخابات میں 15 پاکستانی نڑاد امیدوار بھی کامیاب رہے۔لیبر پارٹی کی

پاکستانی نڑاد ناز شاہ بریڈ فورڈ سے کامیاب ہوئیں، خالد محمود نے برمنگھم، یاسمین قریشی ساؤتھ

بولٹن، افضل خان مانچسٹر کے علاقیگورٹن، طاہر علی برمنگھم کے ہال گرین، محمد یاسین بریڈ فورڈ

شائر، عمران حسین بریڈ فورڈ ایسٹ، زارا سلطانہ کوونٹری ساؤتھ اور شبانہ محمود برمنگھم لیڈی ووڈ

سے ایک بار پھر کامیاب ہوئیں۔کنزرویٹو پارٹی کی طرف سے پاکستانی نڑاد نصرت غنی وئیلڈن،

عمران احمد بیڈفورڈ شائر، ساجد جاوید برومس گرو، رحمان چشتی گلنگھم اور ثاقب بھٹی میریڈن سے

کامیاب ہوئے۔ انتخابات میں واضح اکثریت حاصل کرنے والی جماعت کنزرویٹو پارٹی کے رکن اور

سابق وزیراعظم بورس جانسن نے دوبارہ کامیاب کروانے پر برطانوی عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے

کہا کہ عوام نے انہیں یورپی یونین سے نکلنے کے لیے واضح مینڈیٹ دے دیا ہے اور یہ کہ وہ عوام

کے اعتماد پر پورا اْترنے کے لیے دن رات کام کریں گے۔پولنگ ڈے پر جوش و خروش دیکھنے میں

آیا، خراب موسم کی وجہ سے کچھ علاقوں میں ووٹرز کو مشکلات کا سامنا رہا، سخت سردی اور

بارش کے باوجود ووٹرز کی لمبی قطاریں بنی رہیں۔لیور پول میں 48 افراد کو غلط بیلٹ پیپر دے

دیئے گئے جس کے باعث ووٹرز کو دوبارہ ووٹ ڈالنے پڑے۔ انتخابی عمل کے دوران لنارک شائر

کے علاقے میں دھماکہ خیز ڈیوائس برآمد ہوئی، پولیس نے ایک مشتبہ شخص کو بھی گرفتار کر لیا۔

دوسری جانب صدر یورپی یونین کونسل چارلس مائیکل کا کہنا ہے کہ وہ برطانیہ سے تجارتی

مذاکرات کیلئے تیارہیں۔چارلس مائیکل نے کہا کہ وہ یورپی ترجیحات کے تحفظ کیلئے پوری کوشش

کریں گے۔

Leave a Reply